Bhari Tohfa - Article No. 1414

بھاری تحفہ

اجمل ایک غریب لکڑ ہارا تھا ،جس کی زندگی انتہائی غربت میں گزر رہی تھی ۔کل سے اجمل کی ماں بہت بیمار تھی ،اسی وجہ سے اجمل آج ساری رات بے چین رہا

منگل مئی

Bhari Tohfa
حفصہ فیصل
اجمل ایک غریب لکڑ ہارا تھا ،جس کی زندگی انتہائی غربت میں گزر رہی تھی ۔کل سے اجمل کی ماں بہت بیمار تھی ،اسی وجہ سے اجمل آج ساری رات بے چین رہا اور سورج نکلنے سے پہلے ہی لکڑیاں کاٹنے جنگل کی طرف نکل کھڑا ہوا ،تاکہ زیادہ لکڑیاں کاٹ سکے۔
اس نے فجر کی نماز بھی جنگل ہی میں ادا کی اور اللہ کا نام لے کر لکڑیاں کا ٹنا شروع کر دیں ۔دوپہر ہو چکی تھی ۔سورج سر پر آپہنچا تھا۔اجمل پسینے میں شرابور تھا ،مگر اس کا دل لکڑیوں کے ڈھیر کو دیکھ کر مطمئن تھا۔
اجمل کا جوڑ جوڑ دکھ رہا تھا ،مگر ماں کا بیمار چہرہ اور بچوں کی بھوک کے خیال سے اپنی تھکن بھول کر محنت کرتا رہا۔
لکڑیوں کا گٹھا باندھ کر جب اس نے کمر پر لادا تو وہ کافی وزنی تھی ،اس لیے اجمل آہستہ آہستہ قدم اُٹھاکر چلنے لگا۔

(جاری ہے)

ابھی تھوڑی دور ہی چلا تھا کہ اس کا پاؤں پتھر کی ٹھوکر سے مڑ گیا اور پاؤں میں شدید تکلیف ہونے لگی۔اجمل کی آنکھوں سے آنسو بہنے لگے۔

اس نے التجا بھری نگاہوں سے آسمان کی طرف دیکھا۔
شہزادی ماہ رخ کو شکار کابے حد شوق تھا۔آج وہ شکار کے لیے جنگل کی طرف آنکلی۔گھوڑے پر سوار شہزادی نے جب اجمل کو اس طرح زمین پر بیٹھے ،روتے ہوئے دیکھا تو اس کا دل پسیج گیا اور اس نے پوچھے بنا ہی اجمل کی ساری کیفیت کو بھانپ لیا۔

”میاں خان!اپنا گھوڑا اس غریب لکڑ ہارے کو دے دو۔“شہزادی نے حکم دیا۔
”جی جی حضور !کہتا ہوا سپاہی اپنے گھوڑے سے اُتر ا اور گھوڑا اجمل کی طرف بڑھا دیا۔اعلانسل کا گھوڑا اس پر قیمتی زین اور لگام دیکھ کر اجمل کی آنکھیں ایک بار پھر چھلک پڑیں۔

وہ ہڑ بڑا کر اُٹھا اور شہزادی کے حضور آداب بجالایا،پھر اپنی لکڑیوں کا گٹھا گھوڑے کی پیٹھ پر لاد کر سوار ہو گیا۔
بازار میں اجمل جب آن بان سے داخل ہو ا تو وہاں پر موجود لوگ کبھی اجمل کو اور کبھی گھوڑے کو حیرت سے دیکھنے لگے۔

اجمل نے جب شہزادی کی نوازش کا واقعہ بتایا تو اکثر کو اس کی بات پر یقین نہیں آیا۔
پھر اس نے لکڑیاں بیچیں ۔آج معمول سے زیادہ رقم ہاتھ آئی۔اجمل دل ہی دل میں خدا کا شکر گزار تھا۔اجمل نے ماں کے لیے دوا اور گھر والوں کے لیے کھانے پینے کی چیزیں خریدیں اور بڑی شان سے گھوڑے پر سوار ہو کر گھر پہنچا۔
ماں اور بیوی بچے اجمل کو حیرت سے دیکھنے لگے۔اجمل نے تمام واقعہ بیان کیا،جسے سن کر سب بہت خوش ہوئے۔
اب گھوڑے کے رکھنے کا مسئلہ در پیش تھا۔اس کے چارے پانی کی بھی فکر تھی۔بے چارے اجمل کے پاس نہ تو بادشاہوں کی طرح اصطبل تھا اور نہ بہترین قسم کا چارا تھا،جو اس گھوڑے کی خوراک تھی۔
اجمل کو یہ خیال بھی پریشان کر رہا تھا کہ کہیں رات کے اندھیرے میں کوئی چوراُچکا گھوڑے کو نہ لے اُڑے۔
چند گھنٹوں پہلے جو گھوڑا اجمل کے لیے باعث فخر بنا ہوا تھا ،اب وہ اس کو زحمت لگ رہا تھا۔
اجمل ساری رات جاگتا رہا اور گھوڑے کی نگرانی کرتا رہا۔

صبح اجمل ایک فیصلہ کر چکا تھا وہ اس بھاری تحفے کا بوجھ نہیں اُٹھا سکتا تھا،اس لیے وہ اسے شہزادی کولوٹانے نکل کھڑا ہوا۔
شاہی دربانوں نے جب ایک غریب آدمی کو شاہی اور اعلانسل کے گھوڑے پر سوار دیکھا تو حیران رہ گئے۔
شہزادی اپنے کمرے کی کھڑکی سے موسم کا لطف لے رہی تھی ۔لکڑ ہارے کو گھوڑے پر سوار دیکھا تو پہچان گئی۔اس نے دربان کو اشارہ کیا کہ اسے اندر آنے دیا جائے۔
دربان لکڑ ہارے کو اندر لے گئے۔اجمل ڈرا ڈرا سا اندر داخل ہوا۔
”ہاں بھئی لکڑ ہارے !کہو کیسے آئے؟“شہزادی نے اجمل سے سوال کیا۔

”حضور !میں آپ کا تحفہ لوٹا نے آیا ہوں۔آپ اس کو واپس لے لیجیے۔آپ کی مہربانی ہوگی اور میں اس کا اہل نہیں ہوں۔“
”مگر کیوں؟“شہزادی نے سوالیہ نگاہوں سے اجمل کی طرف دیکھا۔
”دراصل اس کی حفاظت ،دیکھ بھال اور کھانا پینا میرے لیے بہت مشکل ہے۔
“اجمل نے نپا تلا جواب دیا۔
یہ سن کر شہزادی کو احساس ہو گیا کہ غریب آدمی کے لیے یہ تحفہ واقعی بھاری ہے ۔اس کے بدلے شہزادی نے اشرفیوں کی ایک تھیلی اجمل کو دی تو اسے خوشی ہوئی کہ یہی میرے لیے مناسب ہے،جس کو استعمال میں لا کر اپنے گھر بار اور کاروبار کو بہتر بنا سکتا ہوں اور شہزادی ماہ رخ اس کے چہرے پر خوشی دیکھ کر مسکرانے لگیں۔

مزید اخلاقی کہانیاں

Chirya Ka Inteqam

چڑیا کا انتقام۔۔۔تحریر:ابوعبدالقدوس محمد یحییٰ

Chirya Ka Inteqam

Pahaile

پہیلی

Pahaile

Pencil Ki Chori

پینسل کی چوری

Pencil Ki Chori

Hathi Aur Bandar Main Ho Gayi Larai

ہاتھی اور بندر میں ہوگئی لڑائی

Hathi Aur Bandar Main Ho Gayi Larai

Jadu Ki Geend

جادو کی گیند۔ تحریر: مختار احمد

Jadu Ki Geend

Pehli Tehreer

پہلی تحریر

Pehli Tehreer

Birbal Ki Danishmandi

بیربل کی دانشمندی

Birbal Ki Danishmandi

Alik Slack

علیک سلیک

Alik Slack

Aik Naya Azm

ایک نیا عزم

Aik Naya Azm

Sheer Ki Badshahat

شیر کی بادشاہت

Sheer Ki Badshahat

Matlab Parast

مطلب پرست

Matlab Parast

Wafadar Saadhu

وفادار سادھو

Wafadar Saadhu

Your Thoughts and Comments