Ilm Ki Daulat - Article No. 1963

علم کی دولت

میں اپنی قسمت ضرور آزماؤں گا

منگل 4 مئی 2021

Ilm Ki Daulat
خالد حسین رضا
ایک دفعہ کا ذکر ہے کہ ملک فارس کا بادشاہ بہت پریشان اور دکھی تھا حالانکہ سارے ملک میں بہت خوشحالی تھی اور اس ملک کی عوام بہت سکھی اور خوش تھی اس کے باوجود بھی ملک کا بادشاہ پریشانی میں مبتلا تھا کیونکہ اس کی ایک ہی بیٹی تھی شہزادی فروا جس نے اپنی شادی کے لئے بہت کڑی اور حیران کن شرط رکھ دی تھی وہ شرط یہ تھی کہ جو بھی میرے تین سوالات کا جواب دے گا،میں اس سے ہی شادی کروں گی۔
وہ شہزادی اکلوتی اور امیر ترین ملک کے بادشاہ کی بیٹی تھی اس لئے بہت سے ہمسائیہ ملکوں کے شہزادے،امیر ترین تاجروں اور بہت زیادہ طاقتور سرداروں کے بیٹے اپنی قسمت آزمانے آئے کہ ہم ان سوالات کے جواب دے کر شہزادی سے شادی کرکے ملک کا بادشاہ بنیں گے لیکن وہ تمام کے تمام ناکام لوٹ گئے اور ان سوالات کے جواب نہ دے پائے۔

(جاری ہے)


اسی فکر نے بادشاہ کو بیمار کر دیا اور وہ رو رو کر اپنے پروردگار سے دعائیں کرتا کہ اے میرے مالک تو ہم پر رحم فرما اور ہمارے لئے آسانیاں پیدا فرما،اس کے اپنے ملک میں رہنے والے ایک استاد کے بیٹے علی نے بھی اپنی قسمت آزمانے کا فیصلہ کیا اور اپنے والد کے حضور اپنی درخواست رکھی اور اجازت مانگی تو اس کے والد نے جواب دیا کہ بیٹا دیکھو بہت سے شہزادے اور بڑے بڑے عہدوں والے ناکام لوٹ گئے ہیں اور اگر تم بھی کامیاب نہ ہوئے تو میرا نام خاک میں مل جائے گا کیونکہ بادشاہ کے بہت سارے وزیر اور اس ملک کا قاضی میرے شاگرد رہ چکے ہیں تو وہ کیا کہیں گے کہ ایک عالم اور استاد کا بیٹا ناکام ہو گیا ہے تو علی نے جواب دیا کہ ابا حضور جہاں اتنے بڑے بڑے لوگ ناکام ہو گئے اگر میں بھی کامیاب نہ ہوا تو کیا ہو گا لیکن میں اپنی قسمت ضرور آزماؤں گا۔

بیٹے کی ضد کے آگے اس کے باپ نے رضا مندی ظاہر کر دی اور دعا کی کہ اے میرے مالک میرے بیٹے کو کامیابی عطا کرنا اور مجھے اور میرے دیئے ہوئے علم کو سرخرو کرنا یہ سن کر علی بہت خوش ہوا اور خوشی خوشی اس امتحان کی تیاری کرنے لگا۔
علی کی محل میں جا کر سوالوں کے جواب دینے کی خبر پورے ملک میں پھیل گئی اور چرچا ہونے لگا کہ دیکھو ایک عالم اور استاد کا بیٹا بھی اپنی قسمت آزمانے لگا ہے تو کیا وہ کامیاب ہو گا یا دوسروں کی طرح ناکام لوٹے گا۔پورے ملک میں جشن کا سماں بن گیا۔
مقررہ وقت پر محل میں اتنا رش ہو گیا کہ کہیں بھی جگہ خالی نظر نہیں آرہی تھی تمام وزراء اور امراء اپنی مخصوص کردہ نشستوں پر موجود تھے اور ایک طرف علی بھی اپنی مخصوص کردہ نشست پر بیٹھا تھا اور تمام کے تمام حاضرین بادشاہ،ملکہ اور شہزادی کے انتظار میں تھے۔(جاری ہے)

مزید اخلاقی کہانیاں

Gulehri Ki Challlang

گلہری کی چھلانگ

Gulehri Ki Challlang

Neki Ka Rasta

نیکی کا راستہ!

Neki Ka Rasta

Pakistan Hamara Hai

پاکستان ہمارا ہے

Pakistan Hamara Hai

گفتگو کا سلیقہ

Guftagu Ka Saleeqa

Aqalmand Wazir Zada

عقل مند وزیر زادہ

Aqalmand Wazir Zada

آج کا کام نہ رکھو کل پر

Aaj Ka Kaam Na Rakho Kal Par

Bhola Bhala Ont

بھولابھالااونٹ

Bhola Bhala Ont

Panch Humshakal Bhai

پانچ ہم شکل بھائی

Panch Humshakal Bhai

Badshah Or Neek Wazir

بادشاہ اور نیک وزیر

Badshah Or Neek Wazir

Mujhe Bakra Chahiye

مجھے بکرا چاہئے

Mujhe Bakra Chahiye

Moor Ki Udassi

مور کی اُداسی

Moor Ki Udassi

Laalchi Dhobi

لالچی دھوبی

Laalchi Dhobi

Your Thoughts and Comments