Tahir - Aik Zaheen Larka - Article No. 1861

طاہر،ایک ذہین لڑکا

جب اس کی وین سکول سے چند قدموں کے فاصلے پر رہ گئی تو اچانک طاہر کی وین ایک گہرے کھڈے میں جا گری

پیر دسمبر

Tahir - Aik Zaheen Larka
محمد علیم نظامی
پیارے بچو!آپ نے اکثر لاہور شہر کے کئی چھوٹے بڑے علاقوں میں ٹوٹی پھوٹی سڑکیں اور ان میں گڑھے پڑے دیکھے ہوں گے۔ایسی چیزیں انسانی زندگی کے لئے خطرناک ہوتی ہیں۔خاص طور پر جو بچے صبح سویرے اپنی وین یا بس پر سکول جاتے ہیں اور جب ان کی وین یا بس ان گڑھوں پر سے گزرتی ہے تو بچے ہچکولے کھاتے ہیں اور اپنی نشستوں سے اُچھل کر ایک دوسرے کے اُوپر گرتے ہیں۔

ایک دفعہ ایسا ہوا کہ ایک غریب گھرانے کا بچہ جس کا نام طاہر تھا وہ بھی اپنی وین پر سکول جا رہا تھا۔جب اس کی وین سکول سے چند قدموں کے فاصلے پر رہ گئی تو اچانک طاہر کی وین ایک گہرے کھڈے میں جا گری اور اس وین میں سوار تمام بچے خوفزدہ ہو کر چیخیں مارنے لگے۔
آس پاس کے لوگوں نے جب یہ ماجرا دیکھا تو وہاں جتنے بھی لوگ تھے سب وین کی طرف بھاگے تاکہ ممکنہ حادثہ سے بچوں کو بچایا جائے۔

(جاری ہے)

چنانچہ سبھی لوگوں نے وین کے دروازے کو توڑ کر اس کے اندر گرے پڑے بچوں کو باہر نکالنا شروع کیا۔خوش قسمتی سے طاہر وہ واحد بچہ تھا جو کسی بڑی یا گہری چوٹ سے محفوظ تھا باقی تمام لڑکوں کو چوٹیں آئی تھیں۔


طاہر نے ان لوگوں کو کہا کہ وہ بالکل ٹھیک ہے۔وہ بھی آپ لوگوں کی مدد کرے گا اور زخمی بچوں کو وین سے باہر نکالنے اور انہیں ابتدائی طبی امداد دینے کے لئے ان کے ساتھ کسی قریبی ڈاکٹر کے پاس جائے گا۔لوگ طاہر کی اس ذہانت سے بہت خوش ہوئے۔
چنانچہ طاہر نے دیگر لوگوں کے ساتھ مل کر زخمی بچوں کو وین سے باہر نکالنا شروع کیا تقریباً ایک گھنٹے کے اندر اندر تمام بچے وین سے باہر تھے۔خوش قسمتی سے کسی بھی بچے کو زیادہ گہری چوٹ نہیں آئی تھی۔طاہر نے ایک دو بچوں کو اپنے کندھے پر بیٹھا کر پاس سے گزرنے والی وین میں زخمی بچوں کو سوار کیا اور ڈاکٹر کے پاس لے گیا اسی طرح کرتے کرتے طاہر نے کئی بچوں کو کلینک پہنچایا۔

جبکہ دوسرے افراد بھی طاہر کی طرح بچوں کی مدد کر رہے تھے۔جب تمام زخمی بچے ڈاکٹر کے پاس پہنچ گئے تو ڈاکٹر نے طاہر کو جو کہ خاص طور پر پریشان تھا کہا کہ فکر کی کوئی بات نہیں۔سب بچے خیریت سے ہیں بس کسی کسی بچے کو معمولی چوٹ آئی ہے میں ابھی مرہم پٹی کر دیتا ہوں۔
یوں ڈاکٹر صاحب نے تمام زخمی بچوں کا علاج کیا اور انہیں مرہم پٹی کرکے گھر بھیج دیا اور کم از کم تین دن تک گھر پر آرام کرنے کو کہا اور پھر سکول جانے کی اجازت دی۔ یوں طاہر کی ذہانت اور دوسرے لوگوں کے بروقت بچوں کو ڈاکٹر کے پاس لے جانے سے کوئی بڑا حادثہ پیش نہ آیا اور یوں تمام خوشی خوشی اپنے گھروں کو لوٹ گئے۔

مزید اخلاقی کہانیاں

Bechara Jasoos

بے چارہ جاسوس ۔۔تحریر: مختار احمد

Bechara Jasoos

Shararat Ki Saza

شرارت کی سزا

Shararat Ki Saza

Wolf Aur Lamb

بھیڑیا اور میمنا

Wolf Aur Lamb

Choti Naiki Ko Haqeer Na Samjho

چھوٹی نیکی کو حقیر نہ سمجھو

Choti Naiki Ko Haqeer Na Samjho

Zindagi Ka Sabaq

زندگی کا سبق

Zindagi Ka Sabaq

Zindah Mashinain

زندہ مشینیں

Zindah Mashinain

Ghareeb Saith

غریب سیٹھ

Ghareeb Saith

Zarkhaiz

زرخیز

Zarkhaiz

Beete Ki Zehanat

بیٹے کی ذہانت

Beete Ki Zehanat

Aqalmandi Ka Inaam

عقلمندی کا انعام۔۔۔تحریر: مختار احمد

Aqalmandi Ka Inaam

Baktar Band Jism Ka Malik Gainda

بکتر بند جسم کا مالک گینڈا

Baktar Band Jism Ka Malik Gainda

Achi Soch

اچھی سوچ

Achi Soch

Your Thoughts and Comments