بند کریں
مزاح مزاحیہ ادبشوہر نامہ

مزید مزاحیہ ادب

- مزید مضامین

مزید عنوان

شوہر نامہ
شوہر جی اُٹھو گھر سے نکلو شادی کاسوگ منانا کیا جو ہونا تھا وہ ہو کے ربا اب دل کو اور جلانا کیا

شوہر جی اُٹھو گھر سے نکلو شادی کاسوگ منانا کیا
جو ہونا تھا وہ ہو کے ربا اب دل کو اور جلانا کیا
بیوی کی زبان درازی سے جھنجھلاتے ہو گھبراتے
جب شادی کر ہی بیٹھے ہو تو پھر اب شور مچانا کیا
سب دوستوں کے اکسانے پر اٹھو تو سہی نکلو تو سہی
جب اردو فلم ہی دیکھنی ہے تو شبنم کیا شبانہ کیا
چلو کوٹ کی ساری جیبیوں میں ڈھوند و تو سہی دیکھو تو سہی
اک دس کا نوٹ ہی مل جائے تو ہاتھ اپنا پھیلانا کیا
شب بیتی چاند بھی ڈوب چلا اب پاؤں دبانا بند کرو
اُٹھو جلدی آٹا گوندھو تمہیں ناشتہ نہیں بنانا کیا
شادی ہو گئی آذادی چھنی زنجیر پڑی اب پیروں میں
میاں آنکھیں لڑانا بند کرو اب ہنسناکیا اور ہنسانا کیا
اب تم شوہر ہو حسد میں رہو اورآنکھ مٹکاجانے دو
بیوی کے قہر کر نہ دعوت دو تمہیں لوٹ کے گھر نہیں جانا کیا
لو بھئی اب اٹھ بیٹھو چائے کا پانی رکھو جا کر
بیوی کو اگر چائے نہ ملی تو رات کو کھاؤ گے کھانا کیا

(2) ووٹ وصول ہوئے