قصور، چونیاںسے اغوا ہونے والے تین بچے مبینہ بد فعلی کے بعد قتل، لاشیں برآمد

منگل ستمبر 21:57

قصور۔17ستمبر(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین - اے پی پی۔ 17 ستمبر2019ء) چونیاںسے اغوا ہونے والے تین بچوں کو مبینہ بد فعلی کے بعد قتل کرکے نعشیں انڈسٹریل اسٹیٹ ٹیبوں میں پھینک دیں، تینوں بچوں کی نعشیں برآمد کی گئیں۔

(جاری ہے)

گزشتہ روز پولیس تھانہ سٹی چونیاں کو اطلاع ملی کہ چونیاں انڈسٹریل اسٹیٹ کے قریب واقع ٹیبوں سے تین بچوں کی لاشیں موجود ہیں جس پر پولیس نے موقع پر پہنچ کر تینوں نعشوں کوبرآمد کر لیا‘ملنے والی نعشوں میں9 سالہ فیضان رمضان جو کہ غوثیہ کالونی چونیاں کا رہائشی ہے کی شناخت ہوئی جوکہ دو روز قبل اغوا ء ہوا تھا جبکہ 9 سالہ علی حسنین اور8سالہ سلمان اکرم جو کہ دو ماہ قبل اغوا ء ہوئے تھے انکی نعشوںکی حالت نا قابل شناخت اور گلی سٹری حالت میں تھیں ۔

ابتدائی طور پر معلوم ہوتا ہے کہ انہیں مبینہ طور پر بد فعلی کے بعد قتل کیا گیا ہے ۔ پولیس کے مطابق تینوں بچوں کی نعشیں ایک ہی جگہ سے ملنے سے معلوم ہوتا ہے ان تمام بچوں کی موت کے پیچھے ایک ہی ملزم یا ملزمان کا ہاتھ ہے ۔ ڈی پی او قصور کے مطابق تینوں بچوں کے اغواء کے مقدمات الگ الگ درج ہیں اور انکے ساتھ بد فعلی ہوئی ہے یا نہیں اسکا پتہ میڈیکل رپورٹ آنے کے بعد ہوگا تاہم پولیس دو یا تین دن میں ملزمان کوگرفتارکرلے گی۔

متعلقہ عنوان :

چونیاں شہر میں شائع ہونے والی مزید خبریں:

Your Thoughts and Comments