ْفیصل آباد میں 24 گھنٹوں میں کورونا کے 26 نئے کیسیز سامنے آئے ہیں ، ڈپٹی دسٹرکٹ آفیسر ہیلتھ

جمعہ نومبر 12:16

ْفیصل آباد میں 24 گھنٹوں میں کورونا کے 26 نئے کیسیز سامنے آئے ہیں ، ڈپٹی ..
فیصل آباد (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین - اے پی پی۔ 27 نومبر2020ء) کورونا وائرس کی عالمی وبا کی دوسری تازہ لہر کے نتیجہ میں فیصل آباد میں کورونا کے مریضوں کی تعداد میں ہر گزرتے روز مسلسل اضافہ ہونے لگاہے جبکہ حالیہ 24 گھنٹوں میں کورونا کی1259 ٹیسٹوں کے دوران 26 افراد کے ٹیسٹ پازیٹو آگئے نیز ایک روز کے دوران کووڈ 19 کے کل1259ٹیسٹوں میں سی1233 افراد کے ٹیسٹ نیگیٹونکلے ہیں۔

ڈسٹرکٹ ہیلتھ اتھارٹی فیصل آباد کے ڈپٹی دسٹرکٹ آفیسر ہیلتھ ڈاکٹر آصف شہزاد نے جمعہ کے روز اے پی پی کو بتایا کہ فیصل آباد کی سرکاری اور پرائیویٹ لیبارٹریز میں کورونا وائرس کے حوالے سے گزشتہ ایک روز کے دوران کل 1259ٹیسٹ کئے گئے جن میں سی1233افراد کے ٹیسٹ نیگیٹو اور26فراد کے ٹیسٹ پازیٹو آئے ہیں۔ انہوں نے بتایا کہ کورونا کے کسی بھی مشتبہ مریض کے بارے میں معلومات ملیں تو اسے گھر سے بلا کر سیمپل لیا جاتا ہے اور اگر مریض کا کورونا ٹیسٹ مثبت پایا جائے تو اسے کورونا کیلئے مخصوص ہسپتالوں میں بھیج دیا جاتا ہے۔

(جاری ہے)

انہوں نے کہا کہ کورونا کی دوسرے لہر سے نمٹنے کیلئے ہم مکمل طور پر تیار ہیں۔ انہوں نے بتایا کہ فیصل آباد میں کورونا کے مریضوں کیلئے مخصوص کئے گئے دونوں ہسپتالوں میں کل 635 بیڈز مختص کئے گئے ہیں۔ انہوں نے بتایا کہ اس وقت الائیڈ ہسپتال فیصل آباد میں 550بیڈز کورونا کے مریضوں کیلئے مخصوص کئے گئے ہیں جبکہ ڈی ایچ کیو ہسپتال میں کورونا کے مریضوں کیلئی85 بیڈز مخصوص ہیں۔

انہوں نے بتایا کہ اس وقت الائیڈ ہسپتال میں کورونا کی60مریض زیر علاج ہیں جن میں سے 35مثبت جبکہ 25مریض مشتبہ ہیں۔ انہوں نے بتایا کہ اسی طرح ڈسٹرکٹ ہیڈ کوارٹر ہسپتال میں کورونا کے 24 مریض زیر علاج ہیں جن میں 4 کنفرم اور20 مشتبہ مریض شامل ہیں۔انہوں نے کورونا کے تیزی سے پھیلاؤ کے باعث شہریوں سے اپیل کی ہے کہ وہ بیحد احتیاط کا مظاہرہ کریں کیونکہ ان کی معمولی سی غفلت ان کیلئے بعد ازاں خدانخواستہ کسی بڑے نقصان کا باعث بھی بن سکتی ہے۔ انہوں نے بتا یا کہ گزشتہ 24 گھنٹوں کے دوران مزید کوئی مریض جاں بحق نہیں ہو اتاہم فیصل آباد میں کوروناکی وباکے آغاز سے اب تک کل جاں بحق افراد کی تعداد 223ہو چکی ہے۔

فیصل آباد شہر میں شائع ہونے والی مزید خبریں:

Your Thoughts and Comments