فیصل آباد،ریلوے پریم یونین نے ٹرینوں کی نجکاری کے حکومتی فیصلہ کو مسترد کرتے ہوئے ملک گیرسطح پر7اگست سے ریل بچاؤ مہم چلانے کا اعلان کردیا

منگل 3 اگست 2021 22:47

فیصل آباد(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین - آن لائن۔ 03 اگست2021ء) ریلوے پریم یونین نے ٹرینوں کی نجکاری کے حکومتی فیصلہ کو مسترد کرتے ہوئے ملک گیرسطح پر7اگست سے ریل بچاؤ مہم چلانے کا اعلان کردیا۔ ریلوے پریم یونین کے مرکزی سیکرٹری اطلاعات خالدمحمودچوہدری نے لاہور ہیڈکوراٹرزپرمرکزی چیئرمین ضیاء الدین انصاری، صدرشیخ محمد انور کی صدارت میں ہونے والی مرکزی مجلس عاملہ کے اجلاس سے واپسی پر ریلوے اسٹیشن پر کارکنوں سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ پریم یونین پاکستان کے سب سے بڑے دفاعی اور فلاحی ادارے کی بندر بانٹ نہیں ہونے دے گی۔

حکومتی خسارہ پورا کرنے کے لئے قومی اداروں کو نج کاری کی بھینٹ نہیں چڑھنے دیں گے، مزدوروں کے حقوق کیلئے ہرجگہ آواز اٹھائیں گے،حکومت نے ملازمین کے مطالبات تسلیم نہ کئے تو ملک بھر سے مزدور اسلام آباد کا رخ کر لیں گے۔

(جاری ہے)

انہوں نے کہا کہ ریلوے چارٹرڈ کے مطابق کمرشل ادارہ نہیں بلکہ ایک فلاحی ادارہ ہے، فلاحی ادارے نفع نقصان کی بنیاد پر نہیں بلکہ عوام کی فلاح و بہود اور سہولت فراہم کرنے کے لئے چلائے جاتے ہیں جن کی کارکردگی حکومتی مالی سپورٹ پر ہی ممکن ہوتی ہے،جس طرح موٹروے،میٹرو، اورنج ٹرین، سرکاری تعلیمی ادارے اور ہسپتال جیسے ادارے حکومت کی مالی مدد سے عوام کو سہولیات فراہم کرتے ہیں،اسی طرح ریلوے بھی پاکستان کا سب سے بڑاعوام کو سستی سفری سہولیات فراہم کرنے والا ادارہ ہے،ریلوے آج بھی ریلوے ملازمین سے ہٹ کر بھی عوام کو سہولیات فراہم کرہی ہے، 65سال سے زائد عمر کے افراد کو پچاس فیصد جبکہ75سال سے عمر کے افراد کو مفت سفر کی سہولت فراہم کررہی ہے،ٹرینوں کی نجکاری سے عوام اس سہولت سے بھی محروم ہو جائیں گے۔

انہوں نے کہا کہ موجودہ اور سابقہ حکومتوں نے اس ادارے کو اپنے سیاسی مفادات اور فلاحی ادارے کے طور پر استعمال کیا ہے لیکن جس مالی مدد کی ریلوے کو حکومت سے ضرورت تھی ریلوے کو اس سے محروم رکھا گیا۔انہوں نے کہا کہ ریلوے،پی آئی اے،واپڈا کو مزدوروں نے نہیں بلکہ کرپٹ حکومتوں نے تباہ کیا۔خسارے میں چلنے والے اداروں کو بحا ل کرنا حکومت کا کام ہے، اگر ادارے خسارے میں ہیں تو اس کا حل یہ نہیں کہ ان کو بیچ دیا جائے،جھونپڑیوں میں رہنے والوں کو حقوق سے محروم رکھا گیا تو وہ بنگلوں میں رہنے والوں کو بھی چین سے نہیں رہنے دیں گے۔

انہوں نے مطالبہ کیا کہ ریلوے میں سیاسی بنیادوں پر بھرتی کی بجائے حاضر سروس اور ریٹائرڈ ملازمین کے بچوں کا کوٹہ مقرر کیا جائے۔ گزشتہ کئی برسوں سے ریلوے ملازمین کو ٹی اے اور گریجوٹی کی ادائیگی نہیں کی جارہی ہے جبکہ تعمیراتی فنڈز کے نام پر تنخواہوں سے پانچ فیصد ناجائز کٹوتی کی جارہی ہے،اس کو فوری طور پر ختم کیا جائے۔ دورانِ ملازمت وفات پانے والے ملازمین کا جس پیکیج کا وفاقی حکومت نے اعلان کیا ہے پاکستان ریلوے میں فوری طور پر اس پر عمل درآمد کروایا جائے۔

فیصل آباد شہر میں شائع ہونے والی مزید خبریں:

Your Thoughts and Comments