عثمان سومرو کے جاں بحق ہونے سے متعلق حقائق جاننے کیلئے جائے وقوعہ سے ملنے والی رائفل کی فارنزک کرائی جائے،مختیارکار ماجد خاصخیلی کا مطالبہ

ہفتہ 16 اکتوبر 2021 23:19

حیدرآباد(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین - این این آئی۔ 16 اکتوبر2021ء) مختیارکار قاسم آباد ماجد خاصخیلی نے مطالبہ کیا ہے کہ ان کے ملازم عثمان سومرو کے پراسرار طور پر جاں بحق ہونے سے متعلق اصل حقائق جاننے کے لئے جائے وقوعہ سے ملنے والی رائفل کی فارنزک کرائی جائے، معاملے کی غیرجانبدارانہ تحقیقات کے لئے جے آئی ٹی بنائی جائے جو کہ ہمارے ساتھ ہونے والی ناانصافی اور نوعمر عثمان کے خون سے انصاف کرے۔

(جاری ہے)

کراچی کے ہسپتال میں زیرعلاج مختیارکار قاسم آباد ماجد خاصخیلی نے اپنے ایک ویڈیو بیان میں کہا ہے کہ جمعہ کو صبح ساڑھے سات بجے میرا ڈرائیور بچوں کو اسکول چھوڑنے کے لئے آیا تو ملازم عثمان سومرو نے اوطاق کا دروازہ کھولا، صبح 8 بجے کے قریب بچے نے مجھے گھر آ کر بتایا کہ ایک فائر ہوا ہے اور عثمان اوطاق میں مردہ حالت میں پڑا ہوا ہے، جس کے بعد میں بھی اوطاق میں پہنچا، میرے ساتھ میرا گن مین بھی تھا، واقعہ سے متعلق پوچھا تو مجھے بتایا گیا کہ عثمان رات بالکل ٹھیک تھا اور صبح ڈرائیور کے آنے کے وقت بھی صحیح سلامت بیٹھا ہوا تھا، مختیارکار ماجد خاصخیلی کا کہنا ہے کہ اس کے بعد میں نے ڈی سی حیدرآباد کو فون کرکے واقع کی اطلاع دی اور ان کو کہا کہ ایس ایس پی حیدرآباد کو واقعہ سے مطلع کریں، پولیس کو بھیجیں جو پہنچی اور صورتحال کا جائزہ لیا اور جائے، انہوں نے کہا کہ وقوعہ سے ملنے والی رائفل کی فارنزک رپورٹ کرائی جائے تاکہ مرنے والے کے ساتھ انصاف ہو سکے، انہوں نے بتایا کہ میں نے عثمان کے والد محمد اسماعیل سے کہا کہ واقعہ سے متعلق مجھے کچھ نہیں معلوم، پولیس آئی ہے جو بھی کاروائی ہو گی آپ کے سامنے ہو گی اور آپ لوگوں کے ساتھ انصاف ہو گا، انہوں نے کہا کہ نوعمر عثمان نے گذشتہ رات میرے ساتھ کھانا کھایا تھا اور وہ ڈھائی تین سال سے میرے پاس کام کر رہا تھا اور ہمارے درمیان کوئی ایسی بات نہیں تھی اور نہ ہی وہ کبھی ناراض ہوا تھا، مختیارکار قاسم آباد نے کہا کہ سومرو برادری کے افراد نے میرے گھر میں گھس کر مجھے میرے بھائی میرے کزن پر حملہ کیا مشتعل افراد شور مچا رہے تھے کہ پیٹرول لے کر آئو اس گھر کو آگ لگا دو، انہوں نے مطالبہ کیا کہ معاملے کی غیرجانبدارانہ تحقیقات کے لئے جے آئی ٹی بنائی جائے جو کہ ہمارے ساتھ ہونے والی ناانصافی اور نوعمر عثمان کے جاں بحق ہونے کے معاملے کے حقائق کو سامنے لائے۔

حیدرآباد شہر میں شائع ہونے والی مزید خبریں:

Your Thoughts and Comments