خراب کارکردگی کو بنیاد بناکر نوکری سے برطرف کرنا ناانصافی ہے،میاں فیاض ربانی/ غلام شبیر سومرو

جوڈیشری میں ججز کے ساتھ بڑا ظلم کیا جارہاہے، اے سی آر کے لئے بھی رشوت طلب کی جاتی ہے نہ دینے پرججز دربدر پھرتے ہیں،برطرف ججزکی پریس کانفرنس

اتوار 23 جنوری 2022 00:20

حیدرآباد(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین - این این آئی۔ 22 جنوری2022ء) محکمہ جوڈیشری سے خراب کارکردگی کے الزام میں برطرف کئے گئے ججز میاں فیاض ربانی اور غلام شبیر سومرو نے کہاہے کہ مختلف اوقات میں خراب کارکردگی کو بنیاد بناکر نوکری سے برطرف کرنا ناانصافی ہے، جوڈیشری میں ججز کے ساتھ بڑا ظلم کیا جارہاہے، اے سی آر کے لئے بھی رشوت طلب کی جاتی ہے نہ دینے پرججز اے سی آر کے لئے دربدر پھرتے ہیں۔

(جاری ہے)

حیدرآباد پریس کلب میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے برطرف ججز نے کہا کہ میاں فیاض ربانی کی کارکردگی سالانہ رپورٹ 23 مارچ چھٹی والے دن تیار کر کے بھیجی گئی، اس پر نہ تو رپورٹنگ آفیسر کی مہر ہے اور نہ ہی لکھنے کی تاریخ اور نہ ہی کسی شہر کا نام، انہوںنے کہاکہ ہم 2015-16 سے انصاف کے لئے دربدر ہیں کوئی سننے والا نہیں ہے، ہماری تمام درخواستیں مسترد کی جاچکی ہیں، کچھ برطرف ججز کو ریٹائرمنٹ بھی دے دی گئی ہے، کارکردگی کی بنیاد پرنوکری سے برطرف کرنا انصافی ہے، انہوںنے چیف جسٹس سپریم کورٹ سے اپیل کی کہ ہمارے معاملے کا نوٹس لے کر ان تمام غیرآئینی اور غیرقانونی آرڈرز کو کالعدم قرار دے کر اعلی سطحی کمیٹی بناکر انصاف فراہم کیاجائے۔

حیدرآباد شہر میں شائع ہونے والی مزید خبریں:

Your Thoughts and Comments