پاک بھارت دو طرفہ تجارتی تعلقات کے ایشیاء کے استحکام پر نمایاں اثرات مرتب ہوں گے، پاکستان بزنس فورم

پیر 18 اکتوبر 2021 13:05

اسلام آباد(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین - اے پی پی۔ 18 اکتوبر2021ء) پاکستان بزنس فورم (پی بی ایف) کے نائب صدر  چوہدری احمد جواد نے کہا ہے کہ پاک بھارت دو طرفہ تجارتی تعلقات کے ایشیاء کے استحکام پر نمایاں اثرات مرتب ہوں گے، چین اور بھارت کے  درمیان کشیدگی کے باوجود دونوں ممالک کی باہمی تجارت کا تخمینہ 77 بلین ڈالر ہے،پاک بھارت تعلقات کی حالیہ رفتار نہ صرف دونوں ممالک بلکہ خطے کے لئے بھی خوش آئند پیشرفت ثابت ہو سکتی ہے۔

پیر کو میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے  ان  کا کہنا تھا کہ بھارت نے کچھ ماہ پہلے  اشارہ دیا تھا کہ وہ پاکستان کے ساتھ تجارت دوبارہ شروع کرنے کے لئے تیار ہے۔  انٹرنیشنل اکنامک ریلیشنز ریسرچ برائے تحقیقاتی کونسل کے ذریعے 2013 میں "پاکستان بھارت تجارت کو معمول پر لانا" کی ایک رپورٹ کا حوالہ دیتے ہوئے احمد جواد نے کہا کہ پاکستان اور بھارت کے  درمیان تجارتی صلاحیتوں کا تخمینہ 11 بلین  ڈالر سے 20 ارب ڈالر کے درمیان ہے، اگرچہ پاک بھارت تجارت کا زیادہ تر حصہ مستقل طور پر غیر رسمی ہے لیکن اگر دونوں ملکوں کے تجارتی  تعلقات مستحکم ہوں تو اس سے باضابطہ تجارت میں اضافہ ہوگا اور دونوں ممالک  ترقی یافتہ اور خوشحال ہو سکتے ہیں جو آخر کار دونوں ممالک میں غربت اور بے روزگاری کو ختم کر نے میں مدد دے گی۔

(جاری ہے)

انہوں نے کہا کہ موجودہ پیشرفت دونوں ممالک کو باہمی، سماجی، سیاسی اور معاشی تعلقات کو بڑھانے کے لئے نئے دروازے کھولنے کے لئے بات چیت کا آغاز کرنے کا موقع فراہم کر سکتی ہے۔ان کا کہنا تھا کہ چین اور بھارت کے  درمیان کشیدگی کے باوجود دونوں ممالک کے درمیان تجارت کا سالانہ تخمینہ 77 ارب ڈالر ہے۔

اسلام آباد شہر میں شائع ہونے والی مزید خبریں:

Your Thoughts and Comments