اسلام آباد ہائی کورٹ ، خواجہ آصف کو نااہل قرار دینے سے متعلق عثمان ڈار کی درخواست پر دونوں فریقین کو دلائل مکمل کرنے کی ہدایت

درخواست گزار کو آئندہ سماعت پر تحریری بیان عدالت میں جمع کرانے کا حکم، سماعت ایک ہفتے تک ملتوی

منگل اپریل 21:16

اسلام آباد ہائی کورٹ ، خواجہ آصف کو نااہل قرار دینے سے متعلق  عثمان ..
اسلام آباد (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 03 اپریل2018ء) اسلام آباد ہائی کورٹ کے 3رکنی لارجر بنچ نے وفاقی وزیر خارجہ خواجہ آصف کو نااہل قرار دینے سے متعلق پاکستان تحریک انصاف کے رہنما عثمان ڈار کی درخواست پر دونوں فریقین کو دلائل مکمل کرنے کی ہدایت کرتے ہوئے سماعت ایک ہفتے تک ملتوی کر دی ، درخواست گزار کو آئندہ سماعت پر تحریری بیان عدالت میں جمع کرانے کا حکم دیا ہے۔

منگل کو جسٹس اطہر من اللہ، جسٹس عامر فاروق اور جسٹس محسن اختر کیانی پر مشتمل تین رکنی لارجر بنچ نے پی ٹی آئی کے رہنما عثمان ڈار کی درخواست پر سماعت کی تو عثمان ڈار اپنے وکیل سکندر بشیر ایڈووکیٹ کے ساتھ عدالت میں پیش ہوئے ، سماعت کا آغاز ہوا تو خواجہ آصف کے وکیل نے دلائل دیتے ہوئے موقف اختیار کیا کہ خواجہ آصف کے وکیل نے کہا کہ1983 سے خواجہ آصف کے پاس اقامہ ہے،خواجہ آصف کا اقامہ، پاسپورٹ اور انکم ٹیکس گوشوارے کی کاپیاں الیکشن کمیشن میں جمع کرائی ہیں، 2013 کے عام انتخابات میں خواجہ آصف نے اقامہ ظاہر کیا ہے،عثمان ڈار کے وکیل نے کہا کہ خواجہ آصف نے بنک اکاؤٹس چھپائے ہیں، خواجہ آصف نے کاغذات نامزدگی میں اپنے اور اپنی اہلیہ کے اثاثے ظاہر نہیں کئے۔

(جاری ہے)

خواجہ آصف مختلف مواقع پر بیرون ملک کنٹریکٹ پر کل وقتی ملازم رہے اور پاکستان میں اپنی بیرون ملک ملازمت ظاہر نہیں کی۔ جسٹس اطہر من اللہ نے خواجہ آصف کے وکیل سے استفسار کیا کہ خواجہ آصف کااقامہ قبول کرتے ہیں وکیل نے کہا کہ خواجہ آصف کے اقامہ سے متعلق تحریری جواب کو قبول کرتا ہوں، خواجہ آصف نے بیرون ملک ملازمت نہیں چھپائی۔ عثمان ڈار کے وکیل نے کہا کہ دستاویز میں کہا گیا ہے کہ خواجہ آصف ماہانہ 16 لاکھ تنخواہ لے رہے ہیں، خواجہ آصف نے غیر ملکی کمپنی کے ساتھ 8 گھنٹے کام کا معاہدہ کیا اور وفاقی وزیر ہوتے ہوئے غیر ملکی ملازمت کا عتراف کیا ، بطور وزیر خارجہ خواجہ آصف کی بیرون ملک ملازمت حلف سے غداری ہے ، 2012 اور 2013 کے انکم ٹیکس گوشواروں میں غیر ملکی تنخواہ اور مکمل اثاثے ظاہر نہیں کئے۔

فاضل عدالت نے 9اپریل تک سماعت ملتوی کرتے ہوئے فریقین کو دلائل مکمل کرنے کی ہدایت کی ہے۔ ۔۔۔۔

متعلقہ عنوان :

اسلام آباد شہر میں شائع ہونے والی مزید خبریں:

Your Thoughts and Comments