اُردو پوائنٹ پاکستان اسلام آباداسلام آباد کی خبریںاحتساب عدالت کا نواز شریف کے خلاف دونوں ریفرنسز کا فیصلہ ایک ساتھ سنانے ..

احتساب عدالت کا نواز شریف کے خلاف دونوں ریفرنسز کا فیصلہ ایک ساتھ سنانے کا حکم

سابق وزیر اعظم انتہائی سخت سکیورٹی میں اڈیالہ جیل سے احتساب عدالت لایا گیا ،ْ آئندہ سماعت پر واجد ضیاء پر جرح ہوگی , دو افراد کی نوازشریف کے قافلے پر گل پاشی کی کوشش ،ْ پولیس اہلکاروں نے دونوں کو حراست میں لے لیا

اسلام آباد(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 20 اگست2018ء)احتساب عدالت نے سابق وزیراعظم نواز شریف کے خلاف العزیزیہ اسٹیل ملز اور فلیگ شپ انویسٹمنٹ ریفرنسز کا فیصلہ ایک ساتھ سنانے کا حکم جاری کرتے ہوئے سماعت 27 اگست تک کیلئے ملتوی کردی۔ پیر کو احتساب عدالت نمبر دو کے جج محمد ارشد ملک نے نواز شریف کے خلاف نیب ریفرنسز کی سماعت کی۔سماعت کے موقع پر سابق وزیراعظم نواز شریف کو انتہائی سخت سیکیورٹی میں اڈیالہ جیل سے احتساب عدالت لایا گیا، اس موقع پر اڈیالہ جیل کے باہر دو افراد نے نواز شریف کے قافلے پر گل پاشی کی کوشش کی، تاہم پولیس اہلکاروں نے دونوں افراد کو حراست میں لے لیا۔

احتساب عدالت میں نواز شریف کے وکیل خواجہ حارث اور ڈپٹی پراسیکیوٹر جنرل نیب سردار مظفر عباسی پیش ہوئے۔

(خبر جاری ہے)

سماعت کے دوران خواجہ حارث نے نواز شریف کے خلاف بقیہ دونوں ریفرنسز کا فیصلہ ایک ساتھ سنائے جانے کے حق میں دلائل دیتے ہوئے کہا کہ احتساب عدالت نمبر ایک نے بھی تینوں ریفرنسز کا فیصلہ ایک ساتھ سنانے کا فیصلہ کیا تھا، مگر عدالت نے صرف ایون فیلڈ ریفرنس کا فیصلہ سنایا۔

خواجہ حارث کا کہنا تھا کہ تینوں ریفرنسز کا فیصلہ ایک ساتھ نہ آنے کے باعث دیگر 2 ریفرنسز اس عدالت میں منتقل ہوئے۔اس موقع پر نیب پراسیکیوٹر نے کہا کہ دونوں ریفرنسز کا فیصلہ ایک ساتھ کرنا ہے یا علیحدہ، اس کا فیصلہ عدالت کو کرنا ہے، کوئی عدالت کو ڈکٹیٹ نہیں کرسکتا۔تاہم دلائل سننے کے بعد احتساب عدالت نے خواجہ حارث کی دونوں ریفرنسز کا فیصلہ ایک ساتھ سنانے کی استدعا منظور کرلی۔

احتساب عدالت نے پاناما جے آئی ٹی کے سربراہ واجد ضیاء کو بھی طلب کر رکھا تھا۔سماعت کے دوران ان کی غیرموجودگی پر جج ارشد ملک نے استفسار کیا کہ واجد ضیاء کہاں ہیں ،ْابھی تک پیش نہیں ہوئے۔نیب پراسیکیوٹر نے عدالت کو آگاہ کیا کہ واجد ضیاء راستے میں ہیں ،ْریکارڈ لے کر آرہے ہیں۔سردار مظفر عباسی نے کہا کہ گزشتہ سماعت پر تفتیشی افسر کا بیان ریکارڈ کرنا شروع کیا تھا، پہلے اسے مکمل کیا جائے تاہم خواجہ حارث نے کہا کہ ابھی میں نے ہائی کورٹ جانا ہے، وہاں سے یہاں واپسی ممکن نہیں جس پر جج ارشد ملک نے ریمارکس دیئے کہ اس کا مطلب ہے کہ واجد ضیاء پر اس وقت جرح نہیں ہوسکتی۔

اس کے ساتھ ہی عدالت نے نواز شریف کے خلاف العزیزیہ اسٹیل ملز اور فلیگ شپ ریفرنس کی سماعت پیر 27 اگست تک کے لیے ملتوی کرتے ہوئے ریمارکس دیئے کہ آئندہ سماعت پر واجد ضیاء پر جرح کی جائے گی۔

اپنی رائے کا اظہار کریں -

اسلام آباد شہر کی مزید خبریں