بعض شخصیات کی جانب سے کالا باغ ڈیم کی تعمیر کا اعادہ ناقابل قبول ہے ،مولانا عبدالغفور حیدری

دھاندلی زدہ انتخابات کی تحقیقات کیلئے ایک ماہ کا عرصہ گزرنے کے باوجود نہ بن پانا حکومت کی ناکامی ہے، اجلاس سے خطاب

منگل ستمبر 20:12

بعض شخصیات کی جانب سے کالا باغ ڈیم کی تعمیر کا اعادہ ناقابل قبول ہے ..
اسلام آباد(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 18 ستمبر2018ء) جمعیت علماء اسلام کے مرکزی سیکرٹری جنرل سینیٹر مولانا عبدالغفور حیدری نے کہا ہے کہ بعض شخصیات کی جانب سے کالا باغ ڈیم کی تعمیر کا اعادہ ناقابل قبول ہے ، دھاندلی زدہ انتخابات کی تحقیقات کیلئے ایک ماہ کا عرصہ گزرنے کے باوجود نہ بن پانا حکومت کی ناکامی ہے ، کسی قوم یا قومی شخصیات کی تضحیک ناقابل قبول ہے، مدنی ریاست کی بات کرنے والے اپنے چھ فٹ کے قد پہ پہلے ریاست مدینہ کا عملی نمونہ پیش کرے۔

(جاری ہے)

ان خیالات کا اظہار جمعیت علماء اسلام کے مرکزی سیکرٹری جنرل سینیٹر مولانا عبدالغفور حیدری نے سینیٹ کے اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کیا انہوں نے کہا کہ کالا باغ ڈیم کی تعمیر کو تین صوبوں نے متفقہ قراردادوں کے ذریعے مسترد کیا تھا لیکن آج بعض شخصیات کی جانب سے کالا باغ ڈیم تعمیر کی تجویز قوم میں انتشار پیدا کرنے کے مترادف ہے ایسی شخصیات اور حکومت کو متنازعہ مسائل چھیڑنے سے باز رہنی چاہیے جمعیت علماء اسلام نے آبی ذخائر بڑھانے کیلئے ہمیشہ ڈیمز کی تعمیر پہ زور دیا ہے مگر حکمرانوں کی سوئی صرف کالا باغ ڈیم پہ اٹکی ہوئی ہے جسے تین صوبوں نے متفقہ طور پہ مسترد کردیا ہے 12 ستمبر تک 25جولائی 2018 کے بدترین دھاندلی زدہ انتخابات کیلئے پارلیمانی کمیشن تشکیل دینی تھی جسکی حکومت نے خود پیشکش کی تھی جو پارلیمنٹ کی دونوں ہاوسز پہ مشتمل تھی لیکن آج تک حکومت اس میں کامیاب نہیں ہو سکی ہم نے صدارتی انتخابات کے موقع پر اس لیئے واک آوٹ کیا کہ کہ ہم حکومت کو یاد دلانا چاہتے تھے یہ فیصلہ ہوا تھا کہ 12 ستمبر تک پارلیمنٹری کمیشن کا قیام عمل میں لایا جائیگا اور 13 ستمبر کو صدر کا خطاب ہوگا مگر حکومت نے وعدہ خلافی کی انہوں نے کہا کہ پارلیمنٹری کمیشن کی فوری تشکیل ہونی چائیے تاکہ پتہ لگایا جاسکے 2018 کے انتخابات میں کہاں کہاں دھاندلی ہوئی انہوں نے کہا کہ موجودہ حکومت ریاست مدینہ کی بات کرتی ہے ریاست کا آغاز وہ اپنی چھ فٹ قد سے کرے حکومت ایسی بات کیوں کرتی ہے جو خود نہیں کرتی انہوں نے کہا کہ حکومت اور میڈیا بعض قوموں اور شخصیات کی کی مل کر تضحیک کررہے ہیں جب چاہے کسی قوم یا شخصیت کی پگڑی اچھالی جاتی ہے اس قسم کی حرکتیں ناقابل قبول ہے اس سلسلے میں پارلیمنٹ قانون سازی کرے اور بے لگام میڈیا کو لگام دینے کیلئے اقدامات کرے۔

اسلام آباد شہر میں شائع ہونے والی مزید خبریں:

Your Thoughts and Comments