اپوزیشن کی کل جماعتی کانفرنس ناکام ہو گئی، اے پی سی اعلامیہ اپوزیشن کی نالائقی اور تحریری بدتمیزی کا منہ بولتا ثبوت ہے،

اے پی سی اعلامیہ کھسیانی بلی کھمبا نوچے کے مترادف ہے، اے پی سی اعلامیہ میں اپنے بنائے ہوئے الیکشن کمیشن پر عدم اطمینان کا اظہار کیا گیا، گمراہ ٹولہ ہر طرح کی سازشوں میں ناکام ہو گا، اپوزیشن کے منفی ایجنڈے کو مسترد کرتے ہیں،رہبر کبھی چوری، ڈکیتی اور منی لانڈرنگ سے قومی خزانہ نہیں لوٹتا، اپوزیشن کی مجوزہ رہبر کونسل میں 99.9 فیصد لوگوں کے دامن داغدار ہیں، اپوزیشن گیدڑ بھبھکیوں کی بجائے مثبت تجاویز لے کر آئے، وفاقی بجٹ ہر صورت پاس ہو گا، کوئی منظوری سے نہیں روک سکتا وزیراعظم کی معاون خصوصی برائے اطلاعات و نشریات ڈاکٹر فردوس عاشق اعوان کا پریس کانفرنس سے خطاب

بدھ جون 23:10

اپوزیشن کی کل جماعتی کانفرنس ناکام ہو گئی، اے پی سی اعلامیہ اپوزیشن ..
اسلام آباد ۔ (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین - اے پی پی۔ 26 جون2019ء) وزیراعظم کی معاون خصوصی برائے اطلاعات و نشریات ڈاکٹر فردوس عاشق اعوان نے کہا ہے کہ اپوزیشن کی کل جماعتی کانفرنس ناکام ہو گئی، اے پی سی اعلامیہ اپوزیشن کی نالائقی اور تحریری بدتمیزی کا منہ بولتا ثبوت ہے، اے پی سی اعلامیہ کھسیانی بلی کھمبا نوچے کے مترادف ہے، اے پی سی اعلامیہ میں اپنے بنائے ہوئے الیکشن کمیشن پر عدم اطمینان کا اظہار کیا گیا، گمراہ ٹولہ ہر طرح کی سازشوں میں ناکام ہو گا، اپوزیشن کے منفی ایجنڈے کو مسترد کرتے ہیں،رہبر کبھی چوری، ڈکیتی اور منی لانڈرنگ سے قومی خزانہ نہیں لوٹتا، اپوزیشن کی مجوزہ رہبر کونسل میں 99.9 فیصد لوگوں کے دامن داغدار ہیں، اپوزیشن گیدڑ بھبھکیوں کی بجائے مثبت تجاویز لے کر آئے، وفاقی بجٹ ہر صورت پاس ہو گا، کوئی منظوری سے نہیں روک سکتا۔

(جاری ہے)

بدھ کو پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے معاون خصوصی ڈاکٹر فردوس عاشق اعوان نے کہا کہ اے پی سی مسلسل دس گھنٹے جاری رہنے کے بعد ناکام ہو گئی، اے پی سی ارکان اگلے چار سال صبر کے ساتھ پرانی تنخواہ پر کام کریں گے، آستینیں چڑھا کر حکومت گرانے کی خواہش رکھنے والے ایک بیانیے پر بھی متفق نہ ہو سکے۔ انہوں نے کہا کہ اے پی سی اعلامیہ میں کرپشن کی روک تھام کے لئے ایک بھی لفظ شامل نہیں، سیاسی اداکار کرپشن کے لفظ کو معیوب نہیں سمجھتے، سیاسی اداکاروں کو بجٹ میں صرف نقائص ہی نظر آئے، وفاقی بجٹ ہر صورت پاس ہو گا، کوئی منظوری سے نہیں روک سکتا۔

انہوں نے کہا کہ احتساب کا شکنجہ سخت ہوتے ہی اپوزیشن کو عام انتخابات دھاندلی زدہ نظر آنے لگے۔ ڈاکٹر فردوس عاشق اعوان نے کہا کہ اے پی سی اعلامیہ میں اپنے بنائے ہوئے الیکشن کمیشن پر عدم اطمینان کا اظہار کیا گیا، حیرت ہے دس ماہ بعد اپوزیشن کو انتخابات میں دھاندلی نظر آنے لگی، وزیراعظم کو عوام نے ووٹ کی طاقت سے منتخب کیا۔ انہوں نے کہا کہ اے پی سی اعلامیہ کھسیانی بلی کھمبا نوچے کے مترادف ہے، اے پی سی اعلامیہ اپوزیشن کی نالائقی اور تحریری بدتمیزی کا منہ بولتا ثبوت ہے۔

انہوں نے کہا کہ اپوزیشن گیدڑ بھبھکیوں کی بجائے مثبت تجاویز لے کر آئے، فضل الرحمن کا اقتدار سے دوری کا دکھ واضح نظر آ رہا ہے، فضل الرحمن نہ کھیلیں گے نہ کھیلنے دیں گے کی پالیسی پر عمل پیرا ہیں۔ انہوں نے کہا کہ ایک شخص کو سپریم کورٹ نے تاحیات ریجیکٹ کیا ہے۔ معاون خصوصی ڈاکٹر فردوس عاشق اعوان نے کہا کہ اے پی سی اعلامیہ پڑھ کر ہنسی آ رہی ہے، اے پی سی اعلامیہ میں گا، گے، گی کا بے سود صیغہ کثرت سے استعمال کیا گیا ہے، اسفند یار ولی نے آج پیپلزپارٹی کی پیٹھ میں چھرا گھونپا ہے، اے پی سی اعلامیہ میں اپوزیشن کا نوحہ پڑھا جا سکتا ہے۔

بجٹ کے حوالے سے انہوں نے کہا کہ بجٹ ضرور منظور ہوگا کیونکہ اس سے اپوزیشن ارکان کی دال روٹی جڑی ہوئی ہے۔ انہوں نے کہا کہ رہبر کبھی چوری، ڈکیتی اور منی لانڈرنگ سے قومی خزانہ نہیں لوٹتا، اپوزیشن کی مجوزہ رہبر کونسل میں 99.9 فیصد لوگوں کے دامن داغدار ہیں۔ انہوں نے کہا کہ کسی کی خواہشات کے تابع ہر کو ملک نہیں چلایا جا سکتا، گمراہ ٹولہ ہر طرح کی ساشوں میں ناکام ہو گا، اپوزیشن کے منفی ایجنڈے کو مسترد کرتے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ ماضی کے حکمرانوں نے اداروں کو تباہ کرنے میں کوئی کسر نہیں چھوڑی، یہ پاکستان کے ادارے ہیں اور پاکستان کی ضرورت ہیں، آپ انکوائری کمیشن سے خوفزدہ ہیں، آپ کے ہاتھ صاف ہیں تو انکوائری کمیشن کو خوش آمدید کہنا چاہیے، انکوائری کمیشن سے فرار ان کے اصل کردار کی حقیقت ہے۔

اسلام آباد شہر میں شائع ہونے والی مزید خبریں:

Your Thoughts and Comments