محصولات میں گزشتہ مالی سال کے مقابلے میں41 فیصد اضافہ ہوا، چیئرمین ایف بی آر

درآمدات بڑھنے سے کسٹم ڈیوٹی 47 فیصد بڑھی ہے، درآمدات بڑھنے سے ٹیکس آمدن بڑھنا خوش آئند نہیں تشویش ناک ہے، قائمہ کمیٹی کو بریفنگ

جمعرات 23 ستمبر 2021 00:01

اسلام آباد (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین - این این آئی۔ 22 ستمبر2021ء) چیئرمین فیڈرل بورڈ آف ریونیو(ایف بی آر) اشفاق احمد نے قومی اسمبلی کی قائمہ کمیٹی برائے خزانہ کو بتایا ہے کہ محصولات میں گزشتہ مالی سال کے مقابلے میں41 فیصد اضافہ ہوا ہے۔فیض اللہ کموکا کی زیرصدارت قومی اسمبلی کی قائمہ کمیٹی برائے خزانہ کا اجلاس ہوا، چیئرمین ایف بی آر نے بریفنگ میں بتایا کہ محصولات میں گزشتہ مالی سال کے مقابلے میں41 فیصد اضافہ ہوا ہے۔

(جاری ہے)

چیئرمین ایف بی آر نے بتایا کہ محصولات میں اضافے کے ساتھ ٹیکس نظام میں بہتری آئی ہے، 323 ارب روپے سے زائد کے انکم ٹیکس ریفنڈز کی ادائیگی باقی ہے، 181 ارب روپے سیلزٹیکس ریفنڈزصنعتوں کی پیداوارمیں اضافے کیلئے جاری کیے۔مسلم لیگ (ن) کی رکن عائشہ غوث پاشا نے کہا کہ اس وقت جو ہو رہا ہے وہ سب اچھا نہیں ہو رہا۔ چیئرمین ایف بی آر نے بتایا کہ ان کا کام پالیسی بنانا نہیں بلکہ پالیسی پرعمل درآمد کرانا ہے۔ عائشہ غوث پاشا نے کہا کہ درآمدات بڑھنے سے کسٹم ڈیوٹی 47 فیصد بڑھی ہے، درآمدات بڑھنے سے ٹیکس آمدن بڑھنا خوش آئند نہیں تشویش ناک ہے۔

اسلام آباد شہر میں شائع ہونے والی مزید خبریں:

Your Thoughts and Comments