نورمقدم قتل کیس ،مرکزی ملزم ظاہر جعفر کی جانب سے بار بار بولنے کی کوشش، عدالت برہم

بدھ 20 اکتوبر 2021 19:01

نورمقدم قتل کیس ،مرکزی ملزم ظاہر جعفر کی جانب سے بار بار بولنے کی کوشش، عدالت برہم
اسلام آباد (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین - این این آئی۔ 20 اکتوبر2021ء) نور مقدم قتل کیس کی سماعت میں مرکزی ملزم ظاہر جعفر کی جانب سے بار بار بولنے کی کوشش کی گئی جس پر عدالت نے برہمی کا اظہار کیا۔اسلام آبادکی ڈسٹرکٹ اینڈ سیشن کورٹ میں نور مقدم قتل کیس کی سماعت ہوئی جس سلسلے میں پولیس نے مرکزی ملزم ظاہر جعفر سمیت ذاکر جعفر اور عصمت آدم جی کو عدالت میں پیش کیا۔

(جاری ہے)

دورانِ سماعت ملزمان کے وکیل نے دلائل دیتے ہوئے کہا کہ فرد جرم عائد کرنے کی کارروائی ہم نے اسلام آباد ہائیکورٹ میں چیلنج کی ہے، اس درخواست پر نوٹسز ہوچکے ہیں اور مقدمے کے تفتیشی افسربھی ادھر ہی ہیں۔عدالت میں سماعت کے موقع پر مرکزی ملزم ظاہر جعفر نے مسلسل بولنے کی کوشش کی جس پر عدالت نے برہمی کا اظہار کیا جب کہ عدالتی حکم پرپولیس نے مرکزی ملزم کو چپ کرادیا۔سرکاری وکیل نے عدالت کو بتایا کہ استغاثہ اور فنگر پرنٹس لینے والے گواہوں کو بلایا گیا ہے۔ملزمان کے وکیل کے مؤقف پر جج نے کہا اب ہم نے گواہوں کو بھی بلالیا ہے۔بعد ازاں عدالت نے ملزمان کو بخشی خانہ بھیج دیا۔

متعلقہ عنوان :

اسلام آباد شہر میں شائع ہونے والی مزید خبریں:

Your Thoughts and Comments