دنیا کے سامنے مقدمہ پیش کرنے کے لیے پاکستان کو ”معذرت خواہانہ“رویہ ترک کرنا ہوگا.معید یوسف

ہمیں شرمانے کی ضرورت نہیں ہے کیوں کہ ہمارے پاس کچھ چھپانے کے لیے نہیں ہے ‘ ہم نے پاکستان سے متعلق مغربی بیانیے کو اس حد تک جذب کر لیا ہے کہ اندرونی طور پر بھی یہ بحث چھڑ گئی ہے کہ کیا پاکستان کا بیانیہ درست ہے؟.مشیر قومی سلامتی کا سیمنار سے خطاب

Mian Nadeem میاں محمد ندیم جمعرات 28 اکتوبر 2021 14:42

دنیا کے سامنے مقدمہ پیش کرنے کے لیے پاکستان کو ”معذرت خواہانہ“رویہ ترک کرنا ہوگا.معید یوسف
اسلام آباد(اردوپوائنٹ اخبارتازہ ترین-ا نٹرنیشنل پریس ایجنسی۔28 اکتوبر ۔2021 ) مشیر قومی سلامتی معید یوسف نے کہا کہ پاکستان کو” معذرت خواہانہ“ انداز ترک کرکے اپنا بیانیہ دنیا کے سامنے پیش کرنے کی ضرورت ہے اسلام آباد میں قومی بیانیے سے متعلق سیمینار سے خطاب کرتے ہوئے اس سے متعلق اپنے نقطہ نظر کا خاکہ 3 الفاظ میں پیش کیا جس میں فعال غیر معذرت خواہانہ اور حقیقت پسندی شامل ہیں .

انہوں نے کہا کہ ورچوئلی ہم جب بھی رابطہ کریں یہ 3 اصول ہمیں ہر اس جگہ لے جاسکتے ہیں جہاں ہم جانا چاہیں، پاکستان کے لیے شرمانے کی کوئی وجہ نہیں ہے کیوں کہ ہمارے پاس کچھ چھپانے کے لیے نہیں ہے انہوں نے کہا کہ حقیقت یہ ہے کہ ہم نے پاکستان سے متعلق مغربی بیانیے کو اس حد تک جذب کر لیا ہے کہ اندرونی طور پر بھی یہ بحث چھڑ گئی ہے کہ کیا پاکستان کا بیانیہ درست ہے؟مشیر قومی سلامتی نے کہا کہ یہ ان کے لیے’ ’سر چکرانے“ والی صورتحال ہے کیوں کہ ان کے مطابق پاکستان کے پاس یہ بتانے کے لیے ایک”حقیقی کہانی“ تھی کہ ملک کیا کر رہا تھا اور کس کے لیے کھڑا تھا اور اس کے لیے معذرت خواہانہ رویہ اختیار کرنے کی کوئی وجہ نہیں.

انہوں نے کہا کہ ہمارے پاس اصل میں ایک کہانی ہے جو قابل یقین، منطقی اور سچی ہے، جسے ہمیں دنیا کے سامنے پیش کرنا چاہیے تاکہ وہ یہ سمجھ سکیں کہ ہم کون ہیں اور ہم کس کے لیے کھڑے ہیں ان مسائل کو اجاگر کرتے ہوئے کہ جو انہوں نے شناخت کیے معید یوسف کا کہنا تھا کہ سب سے اہم چیز جس نے مجھے سب سے زیادہ پریشان کیا اور اب بھی کرتی ہے وہ پاکستان میں رابطے کے طریقوں میں، مقامی سے زیادہ عالمی، غیر معذرت خواہانہ طور پر اپنا نقطہ نظر پیش کرنے میں شرمانے کا عنصر ہے.

انہوں نے سوال کیا کہ جب پاکستان کے پاس سنانے کو کہانی ہے اور جانتا تھا کہ اسے کیسے بتانا ہے تو پھر جذباتی نہیں بلکہ زیادہ غیر معذرت خواہانہ طور پر یہ بات چیت کیوں نہیں کی گئی کہ واضح کیا جائے کہ پاکستان فلاں فلاں کام کرنے جا رہا ہے کیونکہ یہ ہمارے اسٹریٹجک مفادات میں ہے. معید یوسف نے کہا کہ پاکستان جدید پلیٹ فارمز اور سوشل میڈیا جیسے ذرائع کا استعمال کرتے ہوئے تیز رفتار اسٹریٹجک مواصلات میں دوسرے ممالک سے پیچھے تھا انہوں نے کہا کہ کسی حد تک شاید آج بھی تعلقات عامہ کی ایسی دنیا میں رہ رہے ہیں کہ پریس ریلیز اور چیزوں کا اپنے وقت پر جواب دینا.

معید یوسف کے مطابق ایک اور مسئلہ اپنی زبان دوسروں سے بولنا اور دوسروں سے اسے سمجھنے کی توقع کرناہے ہر موقع پر ہر سامعین کے سامنے ایک ہی بیانیے اور گفتگو کے نکات ہر جگہ استعمال نہیں کیے جا سکتے انہوں نے کہا کہ مواد سے ہٹ کر یہ بھی اہم ہے کہ کون اسے پہنچا رہا ہے اور کس طرح پہنچا رہا ہے. مشیر قومی سلامتی نے ایک اور مسئلے کو اجاگر کرتے ہوئے سوال کیا کہ پاکستانیوں کی آواز کیوں زیادہ کیوں نہیں سنی جا رہی اور کیوں زیادہ لوگ اپنا نقطہ نظر پیش کرنے کے لیے کچھ نہیں لکھ رہے یا پیش نہیں کر رہے، پاکستان کو سمجھنے والے کتنے پاکستانی اہم دارالحکومتوں میں تھنک ٹینکس میں شامل ہیں؟انہوں نے کہا کہ باہر کے نقطہ نظر کے بجائے ملک کے مقامی اور اندرونی تناظر کو سمجھنے والے افراد کی ضرورت ہے.

انہوں نے کہا کہ مغربی دنیا نے 20 سال سے پاکستان کی ایسی تصویر پیش کی ہے جیسے پاکستان افغانستان میں کسی حل کے بجائے مسئلہ ہو انہوں نے کہا کہ اب جو کچھ افغانستان میں ہوچکا اس کے بعد بھی اگر مغربی لوگوں سے بات کریں تو انہوں نے یہ بیانیہ اپنے لیے اتنی مرتبہ دہرالیا ہے کہ وہ اسے حقیقت مانتے ہیں اور آپ چاہے کچھ بھی کرلیں دوسرے فریق کو سمجھانا ورچوئلی نا ممکن ہے.

انہوں نے کہا کہ میرے لیے سوال یہ نہیں ہے کہ انہوں نے جو کچھ کیا اس سے کچھ کیوں نہیں سیکھا؟ وہ زیادہ انصاف پسند کیوں نہیں؟ وہ پاکستان کے ساتھ منصفانہ کیوں نہیں؟ بلکہ مجھے جس سوال کا جواب دینا پڑتا ہے وہ یہ ہے کہ ہم نے بہتر کیوں نہیں کیا انہوں نے کہا کہ مسئلہ کیا ہے؟ ہمارے ملک کی حقیقت ویسی کیوں پیش نہیں کی جاتی جیسی کی جانی چاہیے؟ واشنگٹن میں سابق سفیر سے ایک ملاقات کا احوال سناتے ہوئے انہوں نے کہا میں ہمیشہ کہتا ہوں کہ جب کوئی واشنگٹن سے پاکستان آکر واپس جاتا ہے تو اس کا پاکستان کے حوالے سے بیانہ مختلف ہوتا ہے.

انہوں نے وہ بہت منفی اور حقیقت سے دور چیزیں سوچ کر آتے ہیں اور جب واپس جاتے ہیں کہتے ہیں یہ بالکل مختلف ہے میری آنکھیں کھل گئیں معید یوسف نے کہا کہ حقیقت اور تاثر کا یہ وہ فرق ہے جس سے ہم نبرد آزما ہیںمشیر قومی سلامتی نے قومی بیانیے پر بھی اپنے نقطہ نظر کی وضاحت کرتے ہوئے کہا کہ وہ ایک واحد بیانیے کی کوشش کرنے پر یقین نہیں رکھتے، بیانیہ ہمیشہ حقیقت کا عکاس ہونا چاہیے.

انہوں نے کہا کہ پاکستان اور دیگر ممالک کس طرح بھارت کی جانب اشارہ کرتے ہیں، اس میں فرق ہے انہوں نے کہا کہ ہمارا ماڈل ہماری صحیح حقیقت کو دنیا کے سامنے پیش کرنا ہے جبکہ ان کا ماڈل دوسروں کو بدنام کرنے کے لیے جعلی خبروں کا ایک پورا عالمی نیٹ ورک بنانا ہے جب آپ برطانیہ میں اڑتے ہوئے طیاروں کو پنجشیر میں پاکستان کے طیاروں کی طرح اڑتے ہوئے دکھائیں گے تو اس کے لیے آپ کو بدنام اور شرمسار کیا جائے گا.

مشیر قومی سلامتی نے کہا کہ بیانیہ تخلیق کرنے کے لیے کچھ پیشگی شرائط درکار ہوتی ہیں جن میں ایک پوری حکومت کا یکساں موقف ہونا ہے انہوں نے واضح کیا کہ آپ کا بیانیہ ایسا نہیں ہوسکتا جس میں آپ جو کچھ دنیا کو بتارہے ہوں اس کے حوالے سے فطری طور پر متضاد ہوں، بہتر تعاون کا مطلب بہتر تنائج ہیں معید یوسف نے کہا کہ قومی بیانیے کو اگر عوام کی حمایت نہ حاصل ہو تو اسے حاصل نہیں کیا جاسکتا.

انہوں نے کہا کہ ان اہم معاملات پر قومی مباحثے کی ضرورت ہے جس میںایک اسلامی ملک کی حیثیت سے کردار‘تنوع میں اتحاد‘ہر ایک کے لیے انسانی فلاح‘پاکستان کی جمہوری اور وفاقی نوعیت‘پاکستان کا اپنے ہمسایوں کے ساتھ امن کے لیے موقف‘انہوں نے کہا کہ بنیادی طور پر معیشت، قومی سلامتی اور شناخت کا ایک چارٹر یہ تینوں قومی مکالمے ضروری ہیں تاکہ اس عوامی مکالمے کو قومی بیانیے میں لایا جاسکے.

معیدیوسف نے دہرایا کیا کہ پاکستان کو اپنے آپ کو اس کہانی پر قائل کرنے کی ضرورت ہے جو دنیا کو سننی ہے، ہمیں صرف یہ بات یقینی بنانے کی ضرورت ہے کہ ہم اپنی طاقت کو سمجھتے ہیں۔

(جاری ہے)

انہوں نے کہا کہ وقت کے ساتھ ہر ناقد کو شکست ہوگی ایک بھی ایسی چیز نہیں ہے جس سے پاکستان دنیا کو آگاہ نہ کر رہا ہو اور ایسی کوئی چیز نہیں جس کے بارے میں ہمیں معذرت خواہ ہونا چاہئے یا اس سے باز رہنا چاہیے.

اسلام آباد شہر میں شائع ہونے والی مزید خبریں:

Your Thoughts and Comments