وفاقی وزیر برائے قومی غذائی تحفظ و تحقیق سید فخر امام سے پاکستان میں یورپی یونین کی سفیر اندرولا کمنارا کی ملاقات

پیر 29 نومبر 2021 16:53

وفاقی وزیر برائے قومی غذائی تحفظ و تحقیق سید فخر امام سے پاکستان میں یورپی یونین کی سفیر اندرولا کمنارا کی ملاقات
اسلام آباد۔ (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین - اے پی پی۔ 29 نومبر2021ء) : پاکستان میں یورپی یونین کی سفیر اندرولا کمنارا نے کو وفاقی وزیر برائے قومی غذائی تحفظ و تحقیق سید فخر امام سے ان کے دفتر میں ملاقات کی۔وفاقی وزیر نے سفیر کا خیرمقدم کیا اور یورپی یونین (EU) کی دنیا کے ایک سرکردہ خطے کی حیثیت کی تعریف کی۔ انہوں نے کہا کہ یورپی یونین کے پاس دنیا کی آبادی کا صرف 5.8 فیصد ہے اور اس کے باوجود وہ عالمی جی ڈی پی کا 18 فیصد پیدا کرتے ہیں جو کہ 2021 میں 17 ٹریلین امریکی ڈالر ہے۔

پاکستان کو زراعت کی جدت اور زرعی مصنوعات کی ویلیو ایڈیشن میں یورپی یونین کے تجربات سے استفادہ کرنے کی ضرورت ہے۔فخر امام نے 250 ملین امریکی ڈالر کے یورپی یونین کے ترقیاتی پروگرام کا خیرمقدم کیا جس کا مقصد بنیادی طور پر پاکستان کے زرعی شعبے کی ترقی پر توجہ مرکوز کرنا ہے لیکن اس کا مقصد باغبانی، پانی کے تحفظ اور ہائیڈرو پاور جنریشن، لائیو سٹاک کی ترقی اور انسانی وسائل کی ترقی تھرپارکر اور عمرکوٹ جیسے دیہی علاقوں کے بچوں بالخصوص خواتین کے لیے بنیادی صحت کی سہولیات تک محدود نہیں ہے۔

(جاری ہے)

وفاقی وزریر نے کہا کہ کسانوں کے کام کے ماحول میں وسعت کے لیے ایک جامع نقطہ نظر کی ضرورت ہے۔پاکستان میں یورپی یونین کی سفیر اندرولا کمنارا نے کہا کہ یورپی یونین پاکستان کے دیہی علاقوں میں کسانوں کی انسانی ترقی کو بڑھانے کے ساتھ ساتھ زرعی شعبے کو اپ گریڈ کرنے کے لیے پاکستان کے ساتھ تعاون کرنے کی خواہشمند ہے۔سفیر نے کہا کہ یورپی یونین پہلے ہی پاکستان میں زراعت اور لائیو سٹاک کے تحقیقی نظام کو اپ گریڈ کرنے میں سرمایہ کاری کر رہی ہے لیکن وہ وزارت قومی غذائی تحفظ اور تحقیق کے ساتھ مل کر اپنا دائرہ کار بڑھانا چاہتی ہے۔

انہوں نے کہا کہ 250 ملین امریکی ڈالر کے ترقیاتی پیکج کا آدھا حصہ زراعت کے شعبے اور اس شعبے سے وابستہ انسانی وسائل کی ترقی پر مرکوز ہے۔ ( اندرولا کمنارا) Androulla Kaminara نے کہا کہ یورپی یونین ان منصوبوں کی قیادت کر رہا ہے جن کا مقصد دیہی علاقوں میں ویٹرنری سپورٹ، پانی کی دستیابی، خواتین اور بچوں کو بنیادی طبی صحت کی خدمات فراہم کرنا ہے اور کھیتی باڑی کے متبادل مواقع فراہم کرنا ہے جو بنجر زمین کو دوبارہ حاصل کر سکتے ہیں۔

معزز سفیرنے کہا کہ یورپی یونین موثر اور موثر کھیتی باڑی کے لیے پاکستان کی ٹپوگرافی کا جائزہ لینے کے لیے سیٹلائٹ امیجری جیسی تکنیکی مدد فراہم کر سکتا ہے۔وفاقی وزیرفخر امام نے کہا کہ پاکستان کو بہت سے چیلنجز کا سامنا ہے لیکن یورپی یونین کے ساتھ مل کر درست پالیسی مداخلت سے زرعی شعبے میں تبدیلی لائی جا سکتی ہے۔ انہوں نے کہا کہ پاکستانی زراعت روایتی زرعی تکنیک کے ساتھ آگے بڑھ رہی ہے اور اب وقت آگیا ہے کہ ہم جدیدیت کے حوالے سے مستقبل پر نظر رکھیں۔

وفاقی وزیر نے کہا کہ مٹی کی کوالٹی اور ان پٹ کی قیمت، بیج کے انتخاب وغیرہ کے متعلقہ مسائل ہیں جن پر ہنگامی بنیادوں پر توجہ دینے کی ضرورت ہے۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان دودھ کی پیداوار کے حوالے سے پانچواں بڑا ملک ہے لیکن اس میں سے صرف 7 فیصد پر عملدرآمد ہوتا ہے۔ وفاقی وزیر نے کہا کہ ویلیو ایڈیشن ان بنیادی مسائل میں سے ایک ہے جسے زراعت کے شعبے میں حل کرنے کی ضرورت ہے۔

وفاقی وزیر برائے قومی غذائی تحفظ وتحقیق فخر امام نے موجودہ حکومتوں کی کاوشوں کو سراہتے ہوئے کہا کہ گزشتہ 70 سالوں میں تحقیق کی طرف بڑہنے کی وجہ ناکافی فنڈز تھا۔ پاکستان کی تاریخ میں یہ پہلا موقع ہے کہ وزیر اعظم انیشیٹو پروگرام کے تحت زرعی تحقیق میں اربوں روپے کی سرمایہ کاری کی گئی ہے جس کی وجہ سے گزشتہ سال گندم، مکئی اور چاول کی ریکارڈ پیداوار ہوئی ہے۔

اسلام آباد شہر میں شائع ہونے والی مزید خبریں:

Your Thoughts and Comments