مقبوضہ کشمیر کے عوام اپنے موقف سے پیچھے نہیں ہٹیں گے،

وہ نہتے بھارتی جارحیت کا ڈٹ کر مقابلہ کر رہے ہیں صدر آزاد جموں و کشمیر سردار مسعود خان کا کشمیر یکجہتی یوتھ کنونشن سے خطاب

جمعہ ستمبر 19:19

اسلام آباد ۔ (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین - اے پی پی۔ 20 ستمبر2019ء) صدر آزاد جموں و کشمیر سردار مسعود خان نے کہا ہے کہ بھارتی مقبوضہ جموں و کشمیر میں کشمیریوں کی جدوجہد آزادی کو دبانے کے لئے تعینات 9 لاکھ بھارتی افواج کے لئے مقبوضہ وادی ان کی قبر بن جائے گی۔ کشمیر یکجہتی یوتھ کنونشن سے یہاں خطاب کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ مقبوضہ کشمیر کے عوام اپنے موقف سے پیچھے نہیں ہٹیں گے، وہ نہتے بھارتی جارحیت کا ڈٹ کر مقابلہ کر رہے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ بھارتی افواج بہت جلد اپنی وردیاں بھی چھوڑ کر کشمیر سے بھاگیں گی۔ آزاد جموں و کشمیر کے صدر نے کہا کہ کشمیری عوام اپنے حق خود ارادیت کے لئے جدوجہد میں مصروف عمل ہیں۔ انہوں نے کہا کہ آزاد کشمیر اور گلگت بلتستان کے پاکستان کی پہلی دفاعی لائن ہے جو بھارتی افواج کو اس لائن کو عبور نہیں کرنے دیں گے۔

(جاری ہے)

سردار مسعود خان نے کہا کہ بھارتی حکومت نے مقبوضہ کشمیر میں جو آگ لگائی ہے وہ پورے بھارت کو تباہ کر کے رکھ دے گی۔

صدر آزاد کشمیر نے بھارت کے ساتھ تجارتی اور اقتصادی تعلقات منقطع کرنے اور اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل اور اقوام متحدہ کے انسانی حقوق کی کونسل میں مسئلہ کشمیر کو اجاگر کرنے پر حکومت پاکستان کے اقدامات کو سراہا۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان نے دو ٹوک الفاظ میں پیغام دیا ہے کہ اس کی جدوجہد بھارت کے ہندتوا، فسطائی اور انتہا پسند ذہنیت کے خلاف ہے۔

سردار مسعود خان نے کہا کہ کشمیر کی تاریخ میں یہ پہلی مرتبہ ہوا ہے کہ بین الاقوامی ذرائع ابلاغ نے دنیا کے سامنے بھارت کا حقیقی چہرہ بے نقاب کر دیا اور کشمیر پر بھارتی بیانیہ کو مسترد کر دیا ہے۔ صدر آزاد جموں و کشمیر نے کہا کہ عالمی ذرائع ابلاغ نے پانچ اگست کے بعد سے پیدا ہونے والی کشمیر کی صورتحال پر اپنا مثبت کردار ادا کیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ برطانیہ اور یورپی پارلیمنٹ کے ساتھ ساتھ بھارتی جبر و استبداد کے خلاف سول سوسائٹی کا کردار بھی قابل ستائش ہے لیکن یہ بات افسوسناک ہے کہ با اثر ممالک کی حکومتوں نے اپنے معاشی اور سیاسی مفادات کی خاطر خاموشی اختیار کر رکھی ہے۔

صدر آزاد کشمیر نے کہا کہ یورپی یونین کے رویئے میں بھی تبدیلی آئی ہے جو مقبوضہ وادی میں بھارتی جبرو استبداد کی مذمت کر رہی ہے، یورپی پارلیمنٹ کے اراکین نے بھارت کے ساتھ اپنے مفاداتی روابط کو مسئلہ کشمیر سے مشروط کیا ہے اور اب دو ٹوک انداز میں کہا ہے کہ مقبوضہ کشمیر میں صورتحال انتہائی خطرناک ہے اور جو بھارت کشمیر میں کر رہا ہے وہ قابل قبول نہیں ہے۔

انہوں نے کہا کہ پہلی مرتبہ بین الاقوامی برادری نے بھارتی بیانیہ کو مسترد کر دیا ہے اور مسئلہ کشمیر پر پاکستان کے موقف کو تسلیم کیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ مقبوضہ کشمیر دنیا کی سب سے بڑی جیل میں تبدیل ہو چکا ہے اور لوگوں کو قتل کیا جا رہا ہے، گزشتہ 46 دن سے کشمیر کی 80 لاکھ کی آبادی بھارتی افواج کے محاصرے میں ہے اور اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل نے اس ظلم و نا انصافی پر چپ سادھ رہی ہے۔

صدر آزاد کشمیر چین، ترکی اور ایران کی طرف سے کشمیر کی حمایت پر شکریہ ادا کیا اور ان ملکوں کی طرف سے غیر مشروط حمایت پر ہم ان کے شکر گزار ہیں۔ نوجوانوں کو مخاطب کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ آپ پاکستان اور کشمیر کا مستقبل ہو اور آپ انقلاب برپا کر سکتے ہو۔ انہوں نے نوجوانوں پر زور دیا کہ وہ ملکی سلامتی، ترقی اور خوشحالی کے لئے اپنا کردار ادا کریں۔

اسلام آباد شہر میں شائع ہونے والی مزید خبریں:

Your Thoughts and Comments