اسلام آباد ہائی کورٹ کا بڑے بھائی پر چوری کے الزام میں اس کے دو نابالغ چھوٹے بھائیوں کو گرفتار کرنے پر برہمی کا اظہار

جمعہ مئی 22:19

اسلام آباد ۔ (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین - اے پی پی۔ 24 مئی2019ء) اسلام آباد ہائی کورٹ نے بڑے بھائی پر چوری کے الزام میں اس کے دو نابالغ چھوٹے بھائیوں کو گرفتار کرنے پر برہمی کا اظہار کرتے ہوئے آئی جی اسلام آباد کو نوٹس جاری کرتے ہوئے جواب طلب کر لیا ہے جبکہ ایس ایس پی رینک کے افسر کو پیر کو بچے عدالت میں پیش کرنے کا حکم دیا ہے۔ اسلام آباد ہائی کورٹ کے چیف جسٹس اطہر من اللہ نے تسلیمہ بی بی کی درخواست پر سماعت کی۔

(جاری ہے)

درخواست گزار کے وکیل نے عدالت کو بتایا کہ پولیس نے بڑے بھائی پر چوری کے الزام میں اس کے چھوٹے بھائیوں 12 سالہ علی شیر اور 14 سالہ حمزہ کو حراست میں لے لیا ہے۔ گولڑہ پولیس کے اہلکاروں نے 13 مئی کو بچوں کو حراست میں لیا۔ ایس ایس پی کو درخواست دی لیکن کوئی شنوائی نہیں ہوئی۔ پولیس پورے خاندان کو دھمکیاں دے رہی ہے۔ بچوں کو پولیس کی غیر قانونی حراست سے چھڑایا جائے اور ایس ایس پی اسلام آباد کو ایس ایچ او گولڑہ اور متعلقہ اے ایس آئی کے خلاف کارروائی کا حکم دیا جائے۔ عدالت نے آئی جی اسلام آباد سے جواب طلب کر لیا جبکہ ایس ایس پی رینک کے افسر کو پیر کو بچے عدالت میں پیش کرنے کا حکم سنایا۔

اسلام آباد شہر میں شائع ہونے والی مزید خبریں:

Your Thoughts and Comments