پی ٹی آئی حکومت نے مالیاتی خسارے کو کم کرنے اور ایکسپورٹ میں اضافے کے لئے اقدامات اٹھائے‘

ان حالات میں بہترین بجٹ پیش کیاگیا‘ کراچی کے شہریوں کو صحت اور تعلیم کے مسائل کا سامنا ہے رکن قومی اسمبلی آفتاب حسین صدیقی کا قومی اسمبلی میں بجٹ پر بحث کے دوران اظہار خیال

منگل جون 18:35

اسلام آباد ۔ (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین - اے پی پی۔ 25 جون2019ء) تحریک انصاف کے رکن قومی اسمبلی آفتاب حسین صدیقی نے کہا ہے کہ پی ٹی آئی کی حکومت نے مالیاتی خسارے کو کم کرنے اور ایکسپورٹ میں اضافے کے لئے اقدامات اٹھائے‘ ان حالات میں بہترین بجٹ پیش کیاگیا‘ کراچی کے شہریوں کو صحت اور تعلیم کے مسائل کا سامنا ہے۔ منگل کو قومی اسمبلی میں بجٹ پر بحث میں حصہ لیتے ہوئے آفتاب حسین صدیقی نے کہا کہ پی ٹی آئی نے جب حکومت سنبھالی معاشی صورتحال ابتر تھی‘ ملک دیوالیہ ہونے کے قریب تھا۔

ہمارے زرمبادلہ کے ذخائر دو ہفتہ کے رہ گئے تھے جو قومی سلامتی کے لئے خطرہ تھا۔ گزشتہ سالوں کے دوران ہماری برآمدات منفی صورتحال سے دوچار تھی۔ آج ایوان کا ہر رکن اپنے حلقوں کو پسماندہ کہتا ہے اس کا مطلب ہے کہ گزشتہ دس سالوں سے ترقی نہیں ہوئی۔

(جاری ہے)

اسی طرح قومی ادارے بدحالی کا شکار ہیں۔ گردشی قرضے 1300 ارب تک پہنچ گئے ہیں۔ پی ٹی آئی کی حکومت نے مالیاتی خسارے کو کم کرنے‘ ایکسپورٹ میں اضافے کے لئے اقدامات اٹھائے۔

ان حالات میں ہم نے بہترین بجٹ پیش کیا۔پاک فوج نے حالت جنگ کے باوجود بجٹ میں اضافہ نہیں لیا۔ انہوں نے کہا کہ روشنیوں کے شہر کراچی کو وہاں کی حکومت نے بڑی محنت سے پسماندہ شہر بنا دیا۔ کراچی کے شہری پانی کی بوند بوند کو ترس رہے ہیں اور یہ شہر کچرا کنڈی بن چکا ہے۔ کراچی کے شہریوں کو صحت اور تعلیم کے مسائل کا سامنا ہے۔ انہوں نے تجویز دی کہ وفاق کی طرف سے صوبوں کو دی جانے والی رقم کے حوالے سے وفاقی حکومت کو چار سالہ منصوبہ بندی کے پروگرام کا اعلان کیا جائے۔ کراچی شہر کو غربت اور آبادی کے لحاظ سے فنڈز دیئے جائیں۔

اسلام آباد شہر میں شائع ہونے والی مزید خبریں:

Your Thoughts and Comments