پمز کی تمام یونینز کا پیر سے ایم ٹی آئی سسٹم کیخلاف صبح آٹھ سے دس بجے تک احتجاج کا فیصلہ

3 وفاقی دارالحکومت کے دوسرے ہسپتالوں کے ملازمین کو بھی ایم ٹی آئی سسٹم سے آگاہی فراہم کرکے ان کوبھی احتجاج میں شرکت کی دعوت دی جائیگی، اجلاس میں فیصلہ

بدھ اگست 19:21

o اسلام آباد(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین - آن لائن۔ 21 اگست2019ء) پاکستان انسٹیٹیوٹ آف میڈیکل سائنسزن ( پمز) کی تمام یونینز نے پیر کے دن سے حکومت کی جانب سے مجوزہ ایم ٹی آئی سسٹم لانے کے خلاف صبح آٹھ بجے سے دس بجے تک احتجاج کا فیصلہ کر لیا۔ پمز کی تمام یونینز ینگ ڈاکٹرز۔نرسنگ ایسوسی ایشن۔پیرا میڈیکل ایسوسی ایشن۔ نان میڈیکل ایسوسی یاشن۔

آفیسرز ایسوسی ایشن کے نمائندوں کی بدھ کو پمز میں میٹنگ ہوئی جس میں فیصلہ کیا گیا کے پیر کے دن سے ٹوکن احتجاج کیا جائے اور پیر سے وفاقی دارالحکومت کے دوسرے ہسپتالوں کے ملازمین کو بھی ایم ٹی آئی سسٹم سے آگاہی فراہم کی جائے اور ان کو بتایا جائے کہ اس سسٹم سے مریض اور ملازم مسائل سے دو چار ہو گے۔پمز بحالی تحریک سول سوسائٹی سے بھی رابطہ کرے گی اور ان کو بھی اس احتجاج میں دعوت دے گی۔

(جاری ہے)

پمز بحالی تحریک کے نمائندگان نے کہا کہ انصاف ڈاکٹرز فورم طرز کے ایسوسی ایشن اگر پمز میں اپنی سر گرمیاں اسی طرح جاری رکھے گی تو کل تمام سیاسی جماعتیں اپنے ڈاکٹرز کے ونگ ہسپتال میں بنانا شروع کر دیں گی۔پمز کو سیاسی اکھاڑہ بنا دیا جائے گا اس لیے اس قسم کی سرگرمیوں سے پمز کو پاک کیا جائے۔پمز بحالی تحریک کے ترجمان ڈاکٹر اسفند یار خان نے کہا کہ ہم پمز میں ایم ٹی آئی کو کسی بھی قیمت پر نافذ نہیں ہونے دیں گے پمز کے ملازمین کی مشاورت کے بغیر ہی ایم ٹی آئی لانے کی کوشش کی جارہی ہے جو پمز کے ملازمین کامیاب نہیں ہونے دیں گے۔قاضی زیاد

اسلام آباد شہر میں شائع ہونے والی مزید خبریں:

Your Thoughts and Comments