وزیر اعظم شہباز شریف کی قیادت میں موجودہ حکومت نے صحرائیت سے نمٹنے کے لئے فعال اقدامات اٹھائے ہیں ،رومینہ خورشید عالم

پیر 17 جون 2024 20:20

اسلام آباد (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین - اے پی پی۔ 17 جون2024ء) وزیراعظم کی کوآرڈینیٹر برائے موسمیاتی تبدیلی رومینہ خورشید عالم نے کہا ہے کہ وزیر اعظم شہباز شریف کی قیادت میں موجودہ حکومت نے صحرائیت سے نمٹنے کے لئے فعال اقدامات اٹھائے ہیں ،پاکستان صحرائیت کا مقابلہ کرنے اور زمین کے انحطاط سے نجات حاصل کرنے کے اپنے عزم پر قائم ہے، صحرائوں اور خشک سالی سے نمٹنے کے عالمی دن 17 جون کےموقع پراپنے بیان میں انہوں نے کہا کہ پاکستان جو صحرا کے بڑھنے اور بار بار شدید خشک سالی کا سامنا کر رہا ہے، زمین کے انحطاط کے خلاف جنگ میں ایک اہم موڑ پر کھڑا ہے۔

انہوں نے کہا کہ اس سال کے عالمی صحرائوں کا دن 2024 کا موضوع ''بحالی'' زمین۔آب و ہوا'' ہے، موجودہ حکومت کا عزم اور عملی کوششیں گہری مطابقت رکھتی ہیں تاکہ بنجر زمینوں اور ماحولیاتی نظام کو بحال کرکے، آب و ہوا کی لچک کو بڑھایا جائے اور پائیدار ترقیاتی اہداف کو حاصل کیا جاسکے۔

(جاری ہے)

رومینہ خورشید نے کہا کہ ٹارگٹڈ پالیسیوں، تحقیق اور ٹیکنالوجی میں سرمایہ کاری اور بین الاقوامی تعاون کو فروغ دینے کے ذریعے، پاکستان صحرائیت کا مقابلہ کرنے اور زمین کے انحطاط سے نجات حاصل کرنے کے اپنے عزم پر قائم ہے۔

انہوں نے کہا کہ پاکستان نے اقوام متحدہ کے کنونشن ٹو کمبیٹ ڈیزرٹیفکیشن (یو این سی سی ڈی) پر دستخط کیے ہیں اور صحرائیت سے نمٹنے کے لیے بین الاقوامی شراکت داروں کے ساتھ مل کر کام کر رہا ہے۔ اس مسئلے سے نمٹنے کے لئے پاکستان کی صلاحیت کو بڑھانے کے لئے بین الاقوامی تنظیموں کی طرف سے مختلف منصوبوں اور اقدامات کی حمایت کرتا ہے۔ وزیر اعظم کی کوآرڈینیٹر نے بڑھتی ہوئی ریگستانی اور زمین کے انحطاط کے مسائل کے پیچھے کارفرما عوامل کا ذکر کرتے ہوئے کہا کہ درجہ حرارت میں اضافہ، بارش کے پیٹرن میں تبدیلی یا کمی، بار بار خشک سالی، پودوں اور درختوں کا نقصان ، غیر مستحکم زراعت، آبپاشی کے طریقوں ، شہرکاری، کھیتی باڑی، کان کنی اور صنعتی، نقل و حمل اور فوسل ایندھن سے چلنے والے توانائی کے شعبوں سے کاربن کے اخراج اور جنگلات کی کٹائی بڑی وجوہات ہیں۔

انہوں نے کہا کہ پاکستان کے68 فیصد سے زائد رقبے کو خشک یا نیم خشک قرار دیا گیا ہے جس کی وجہ سے اسے ریگستانی ہونے کا خطرہ لاحق ہے اور حالیہ برسوں میں صحرائی سطح میں اضافے کے نتیجے میں زرخیز مٹی کا نقصان، مٹی کا کٹائو، پانی کی قلت، کم زراعت، زراعت پر مبنی معاش کا نقصان، دیہی غربت میں اضافہ، بھوک اور غذائی قلت، دیہی سے شہری نقل مکانی، ، قدرتی ماحولیاتی نظام کا انحطاط شامل ہیں۔

وزیر اعظم کی کوآرڈینیٹر نے صحرائیت کے چیلنج کی عالمی تصویر شیئر کرتے ہوئے کہا کہ افریقہ، یورپ اور ایشیا کے دیگر ممالک کی طرح پاکستان میں بھی ریگستان ایک سنگین ماحولیاتی مسئلہ بن کر ابھرا ہے جس سے ملک کے بڑے علاقوں پر منفی اثرات مرتب ہو رہے ہیں اور زراعت، آبی وسائل اور معاش کو سنگین خطرہ لاحق ہے۔ تمام عالمی خطوں میں سے افریقہ اور ایشیا سب سے زیادہ متاثر ہونے والے علاقے ہیں، جو صحرائیت کا خمیازہ بھگت رہے ہیں۔

انہوں نے وضاحت کی کہ ایک اندازے کے مطابق، ایشیا میں 2 ارب یا اس سے کچھ کم لوگ صحرائی یا قحط زدہ علاقوں میں رہتے ہیں اور 2050 تک صحرا یا خشک سالی سے متاثرہ افراد کی تعداد 2.5 ارب تک پہنچ جائے گی۔ وزیراعظم کی کوآرڈینیٹر نے اس بات پر زور دیا کہ اس سال 17 جون کو دنیا بھر میں ریگستان کا عالمی دن منانے سے نہ صرف عالمی خطوں بلکہ پاکستان کو درپیش بڑھتے ہوئے ماحولیاتی چیلنجز کی واضح یاد دہانی ہونی چاہیے۔

وزیر اعظم کے معاون خصوصی نے کہا کہ صحرائیت اور زمین کے انحطاط کے چیلنجوں کی روشنی میں وزیر اعظم شہباز شریف کی قیادت میں موجودہ حکومت نے پہلے ہی سول سوسائٹی کی تنظیموں، ماہرین تعلیم اور بین الاقوامی شراکت داروں سمیت مختلف اسٹیک ہولڈرز کے تعاون سے صحرائیت سے نمٹنے کے لئے فعال اقدامات اٹھائے ہیں۔انہوں نے مزید کہا کہ گرین پاکستان پروگرام، کلائمیٹ اسمارٹ ایگریکلچر، نیشنل ایڈیپٹیشن انیشی ایٹو، لیونگ انڈس، کلائمیٹ لچک دار شہری منصوبہ بندی اور مینجمنٹ، ریچارج پاکستان سمیت مختلف اقدامات پر پہلے ہی عمل درآمد کیا جا رہا ہے تاکہ پائیدار لینڈ مینجمنٹ کے طریقوں کو فروغ دیا جا سکے، بنجر زمین کی بحالی اور قدرتی وسائل کے تحفظ کے ساتھ ساتھ زیر زمین پانی کی سطح میں اضافہ کیا جا سکے۔

رومینہ خورشید عالم نے مزید کہا کہ حکومت کی زیر قیادت صحرائیت پر قابو پانے کے ان اقدامات کے تحت ہم مقامی برادریوں، ترقیاتی شراکت داروں، سول سوسائٹی کی تنظیموں کو ریگستان کے خطرے سے نمٹنے میں ان کے کردار کے لئے شامل کرنے کے لئے ہر ممکن اقدامات کر رہے ہیں۔ ملک میں صحرا بردگی کا مقابلہ کرنے کے لئے صحرا بردگی کے اثرات کے بارے میں آگاہی پیدا کرنے کی بھی کوششیں کی جارہی ہیں۔

انہوں نے مزید کہا کہ پائیدار حل کو نافذ کرنے اور بدلتے ہوئے آب و ہوا کے نمونوں کو اپنانے میں ان کی شرکت اور عزم اہم ہیں۔ انہوں نے مزید کہا کہ میرا ماننا ہے کہ پاکستان میں صحرائیت سے نمٹنے کے لئے ایک جامع نقطہ نظر، ماحولیاتی، اقتصادی اور سماجی حکمت عملی کو مربوط کرنے اور مقامی برادریوں اور تمام متعلقہ اسٹیک ہولڈرز کو زمین کے پائیدار استعمال کے حصول اور متاثرہ افراد کے ذریعہ معاش کے تحفظ کے لئے مشغول کرنے کی ضرورت ہے۔ انہوں نے مزید کہاکہ جب ملک صحرا ئیت کا عالمی دن منا رہا ہے، تو آئیے ہم اپنے قدرتی ورثے کے تحفظ کے لئے اپنی اجتماعی ذمہ داری کے عزم کا اعادہ کریں، اپنے زمینی وسائل کی حفاظت کریں، اور آنے والی نسلوں کے لئے ایک پائیدار مستقبل کو یقینی بنائیں۔

اسلام آباد میں شائع ہونے والی مزید خبریں