وزیراعلیٰ سندھ سید مراد علی شاہ نے قابل فخر والد اخبار فروش ہاکر محمد حبیب اور اس کے ہونہار بیٹے انس حبیب جنہوں نے انٹرمیڈیٹ کراچی کے امتحانات میں پہلی پوزیشن حاصل کی وزیراعلیٰ ہائوس بٴْلایا

غ* محمد حبیب اس سے زیادہ تعریف اورمبارکباد کے مستحق ہیں جوکہ انہوں نے اپنے بیٹے انس کے لیے خواب دیکھیں اور باوجود محدود وسائل کے اپنے بیٹے کو اچھی طرح پڑھایا اور اس کی حوصلہ افزائی کی، سید مراد علی شاہ

منگل اکتوبر 23:57

کراچی(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین - آن لائن۔ 22 اکتوبر2019ء) وزیراعلیٰ سندھ سید مراد علی شاہ نے بروز منگل قابل فخر والد اخبار فروش ہاکر محمد حبیب اور اس کے ہونہار بیٹے انس حبیب جنہوں نے انٹرمیڈیٹ کراچی کے امتحانات میں پہلی پوزیشن حاصل کی، کو وزیراعلیٰ ہائوس بٴْلایا۔وزیراعلیٰ سندھ نے کہا کہ محمد حبیب اس سے زیادہ تعریف اورمبارکباد کے مستحق ہیں جوکہ انہوں نے اپنے بیٹے انس کے لیے خواب دیکھیں اور باوجود محدود وسائل کے اپنے بیٹے کو اچھی طرح پڑھایا اور اس کی حوصلہ افزائی کی۔

انہوں نے کہا کہ محمد حبیب کے بیتے انس بھی تعریف کے قابل ہیں کہ انہوں نے اپنے والد کے خوابوں کو حقیقت کا روپ دیا اور امتحان میں نمایاں کامیابی حاصل کرکے اپنا اور اپنے خاندان اور اپنی درسگاہ کا نام روشن کیا۔

(جاری ہے)

انہوں نے کہا کہ میں اس بات پر فخر محسوس کررہا ہوں اور مطمئن ہوں جب میں نے یہ سنا کہ ایک بچہ جس نے پسماندہ بیک گرائونڈ رکھتے ہوئے تعلیمی میدان میں کامیابی حاصل کی۔

انہوں نے کہا کہ اچھی تعلیمی سہولیات کے ساتھ ساتھ سب سے اہم ذاتی دلچسپی اور اچھے تعلیمی کیریئر کے حوالے سے جذبے کی ضرورت ہوتی ہے۔ انہوں نے کہا کہ کتنی ہی مثالیں موجود ہیں باوجود اس کے کہ بہترین سہولیات اور سازگار ماحول ہونے کے طلباء اپنے تعلیمی نتائج کے حصول میں ناکام ہوجاتے ہیں۔ مراد علی شاہ نے انس کو یقین دلایا کہ وہ ان کی اعلیٰ تعلیمی کیرئیر کے حوالے سے ان کے ساتھ ہر ممکن تعاون کریں گے اور انہو ں نے مزید رابطے کے لیے انہیں اپنا فون نمبر بھی دیا۔

وزیراعلیٰ سندھ نے پوزیشن حاصل کرنے والے بچے کے والد محمد حبیب کو اپنے بیٹے کے لیے بہترین تعلیمی کیرئیر کے لیے کی جانے والی کاوشوں کودیکھتے ہوئے انہیں یادگاری شیلڈ پیش کی۔ وزیراعلیٰ سندھ نے انس جنہوں نے کامرس میں پوزیشن حاصل کی ہے کو سندھ کی معیشت پر لکھی ہوئی ایک کتاب بھی پیش کی۔ صوبائی مشیر برائے ماحولیاتی تبدیلی مرتضیٰ وہاب بھی اس موقع پر موجود تھے۔ #

متعلقہ عنوان :

کراچی شہر میں شائع ہونے والی مزید خبریں:

Your Thoughts and Comments