ہزاروں ٹن گندم اور چینی کے بحری جہاز پاکستان پہنچ گئے، قیمتوں میں کمی کا امکان

28 ہزار 760 میٹرک ٹن چینی سے لدا جہاز بندرگاہ پہنچ گیا ایک اور جہاز 28 ہزار 840 میٹرک ٹن چینی لے کر 27 ستمبر کو پہنچ جائے گا ، درآمد کی گئی یہ چینی یوٹیلیٹی اسٹورز پر فروخت ہوگی

Sajid Ali ساجد علی اتوار 26 ستمبر 2021 13:17

ہزاروں ٹن گندم اور چینی کے بحری جہاز پاکستان پہنچ گئے، قیمتوں میں کمی ..
کراچی ( اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین ۔ 26 ستمبر 2021ء ) ہزاروں ٹن گندم اور چینی کے بحری جہاز پاکستان پہنچ گئے ، جس کے بعد ان اشیاء کی قیمتوں میں کمی کا امکان ہے۔ تفصیلات کے مطابق ملک میں اشیائے خور و نوش کی رسد معمول پر رکھنے کے لیے ٹریڈنگ کارپوریشن آف پاکستان کی جانب سے بیرون ملک سے مجموعی طور پر 23 لاکھ میٹرک ٹن گندم درآمد کی جارہی ہے جن میں سے اب تک 3 لاکھ 38 ہزار 37 میٹرک ٹن گندم پاکستان پہنچ چکی ہے ، اس سلسلے میں 59 ہزار 700 میٹرک ٹن گندم لے کر پانچواں بحری جہاز کراچی کی بندرگاہ پر پہنچ گیا ہے اور 29 ستمبر کو چھٹا جہاز 58 ہزار میٹرک ٹن گندم لے کر کراچی پہنچ جائے گا۔

ٹریڈنگ کارپوریشن آف پاکستان کی جانب سے بتایا گیا ہے کہ درآمد کی گئی یہ چینی یوٹیلیٹی اسٹورز پر فروخت ہوگی اور اب تک 28 ہزار 760 میٹرک ٹن چینی سے لدا جہاز بھی بندرگاہ پہنچ گیا ہے جب کہ ایک اور جہاز 28 ہزار 840 میٹرک ٹن چینی لے کر 27 ستمبر کو پہنچ جائے گا۔

(جاری ہے)

دوسری طرف وفاقی وزیر خزانہ شوکت ترین نے کہاہے کہ چار کروڑ لوگوں کو مہنگی اشیائے خوردونوش پر کیش سبسڈی دیں گے، آئی ایم ایف پروگرام کی وجہ سے مہنگائی میں اضافہ ہوا، اشیاء کی اضافی قیمتوں کابوجھ حکومت اٹھائے گی، تیل کی قیمتیں بڑھنے اور گاڑیوں کی درآمد سے ڈالر مہنگا ہوا ہے ۔

اس حوالے سے فیض اللہ کموکا کی زیرصدارت قائمہ کمیٹی برائے خزانہ کا اجلاس ہوا، اجلاس میں اشیائے خودونوش کی قیمتوں اور عوام کو مہنگائی میں ریلیف دینے سے متعلق کمیٹی کو آگاہ کیا گیا ، اجلاس میں چیئرمین ایف بی آر ڈاکٹر اشفاق نے بھی ٹیکس وصولیوں سے متعلق بریفنگ دی۔ اجلاس میں وزیرخزانہ شوکت ترین نے بتایا کہ آئی ایم ایف پروگرام کی وجہ سے مہنگائی میں اضافہ ہوا، سی پی آئی 9 سے گر نیچے 8 فیصد پر آگئی ہے، گھی کی عالمی قیمتوں میں 50 فیصد فرق آیا جس کو ہم نے 30 فیصد پر رکھا، گندم کی قیمتوں میں بھی ساڑھے 13 فیصد اضافہ ہوا۔

کراچی شہر میں شائع ہونے والی مزید خبریں:

Your Thoughts and Comments