ماحولیات سے متعلق دستاویزات اور روڈ میپ شیئر نہ کرنے پر سندھ حکومت کا وفاقی حکومت کو احتجاجی خط

ماحولیات،موسمیاتی تبدیلی اورساحلی ترقی صوبائی سبجیکٹ ہے اور عملدر آمد صوبوں کو کرنا ہے، صوبائی وزیر ماحولیات،موسمیاتی تبدیلی وساحلی ترقی

ہفتہ 23 اکتوبر 2021 15:15

کراچی(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین - این این آئی۔ 23 اکتوبر2021ء) ماحولیات سے متعلق دستاویزات اور روڈ میپ شیئر نہ کرنے پر سندھ حکومت نے وفاقی حکومت کو احتجاجی خط لکھ دیا۔صوبائی وزیربرائے ماحولیات،موسمیاتی تبدیلی وساحلی ترقی اسماعیل راہو نے وزیراعظم کے مشیر ماحولیات امین اسلم کو خط لکھتے ہوئے کہا ہے کہ یونائیٹڈ نیشن کنونشن کلائمنٹ چینج میں وزیراعظم روڈ میپ اور دستاویزات پیش کریں گے جو سندھ کے ساتھ شیئر ہی نہیں کیے گئے اور نہ ہی اس کے لیے صوبوں سے تجاویز لی گئی ہیں۔

اسماعیل راہو نے خط میں کہا کہ ماحولیات،موسمیاتی تبدیلی اورساحلی ترقی صوبائی سبجیکٹ ہے اور عملدر آمد صوبوں کو کرنا ہے۔صوبہ سندھ میں سمندری دخل اندازی اورکٹا، پانی کی قلت،آب و ہوا کی تبدیلی سے متاثرہ ہجرت،پانی کا معیار،فصلوں کی کم پیداوار سمیت دیگر بیماریوں کا پھیلائو شامل ہے۔

(جاری ہے)

انہوں نے کہا کہ وفاقی حکومت MOCC کی جانب سے تیار کردہ دستاویزCOP-26 میں پیش کرے گی۔

دستاویز کی تیاری میں تمام اسٹیک ہولڈرزکی تجاویز اور آرا کو شامل کیا جائے۔وزیراعظم کی زیرصدارت13اکتوبر کے اجلاس میں بھی صوبوں کو بات کرنے کا موقع ہی فراہم نہیں کیا گیا۔صوبائی وزیر نے خط میں کہا کہ متعلقہ قومی اداروں کو ایک پالیسی اقدام کے طور پرہدایت دی جائے کہ منصوبہ سازی کے مراحل میں سب کو شامل کیا جائے۔عملدر آمد کے دوران زیادہ سے زیادہ صوبائی تعاون اور ہم آہنگی کی ضرورت ہوتی ہے۔متحرک تبدیلی کے چیلنجوں کا جواب دینے کے لیے ہم آہنگ کوشش کے منتظر ہیں۔

متعلقہ عنوان :

کراچی شہر میں شائع ہونے والی مزید خبریں:

Your Thoughts and Comments