کمشنر کی زیرصدارت کراچی سرکلر ریلوے کی بحالی کے لئے تجاوزات کے خلاف آپریشن کا جائزہ اجلاس

بدھ مئی 18:55

کراچی۔ (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین - اے پی پی۔ 22 مئی2019ء) کمشنر کراچی افتخار شالوانی نے بدھ کو اپنے دفتر میں سپریم کورت کے احکامات کی روشنی میں کراچی سرکلر ریلوے کی بحالی کے حوالے سے ناجائز تجاوزات کے خلاف آپریشن کے جائزہ اجلاس کی صدارت کی۔بدھ کو جاری کردہ اعلامیہ کے مطابق اجلاس میں ڈی آئی جی آپریشن ریلوے اظہر رشید خان، ڈی ایس ریلوے سید مظہر علی شاہ، میونسپل کمشنر ڈاکٹر سیف الرحمان، ایم ڈی سندھ ماس ٹرانزٹ اتھارٹی اقتدار احمد، ڈپٹی کمشنرز ساوتھ سید صلاح الدین، ایسٹ احمدعلی صدیقی، ویسٹ زاہد میمن، اے ڈی سی سینٹرل کمال حکیم پروجیکٹ ڈا ئریکٹر کے یو ٹی سی شیخ طالب فتاح ریلوے پولیس، ریونیو اور دیگر افسران شامل تھے۔

اجلاس کی صدارت کر تے ہوئے کمشنر کراچی افتخار شالوانی نی14 مئی کا اجلاس، 18 مئی کو کراچی سر کلر ریلوے کے ٹریک روٹ کے دورہ اور وفاقی وزیر ریلوے شیخ رشید کے وچیف سیکر یٹری کے ساتھ اجلاس و کراچی ریلوے ٹریک کے دورے اور نا جائز تجاوزات کے خاتمے کے سلسلے میں شروع کردہ آپریشن کی کارکردگی پر تمام متعلقہ افسران ڈپٹی کمشنرز ایسٹ، ویسٹ، سینٹرل، پاکستان ریلوے، و پولیس، اینٹی انکروچمینٹ کے اہل کاروں کی کاکردگی اوراقدامات کو سراہتے ہوئے کہا کہ آپریشن جاری رہنا چاہیئے اور اس جذبہ و جوش کا ساتھ کراچی سرکلر ریلوے کو جلد از جلد بحالی کی طرف گامزن کرنا ہے اور حکومتی کاوشوں کو سپریم کورٹ کے فیصلے کی روشنی میںجامع طریقے سے عملدر آمد بنانے کے لئے مشترکہ طور پر اپنا اپنا کر دار ادا کرکے عوام کو کراچی سرکلر ریلوے کا تحفہ دینا ہے اور تمام ناجائز تجاوزات کے خاتمے کے بعد دوبارہ یہ قائم نہیں ہونے دیں اور مسلسل نگرانی و پٹرولنگ جاری رکھنی ہے۔

(جاری ہے)

اس سلسلے میںتمام افسران و متعلقہ ادارے اپنی نگرانی جاری رکھ کر رپورٹ پیش کریںگے۔کمشنر کراچی افتخار شالوانی نے مزید کہا کہ کوشش کریںگے کہ 9 جون کو سپریم کورٹ میں عملدر آمد رپورٹ دینے سے قبل پاکستان ریلوے کو درخواست کریںگے کہ تجرباتی بنیادوں پر ایک ٹرائل ٹرین سر کلر ریلوے پر چلائی جائے تاکہ آئندہ مستقل بنیادوں پرسرکلر ریلوے چلانے کے لئے گرئونڈز پر کام کیا جاسکے اور اس سلسلے میں حکومت سندھ کو با ضابطہ طور پر درخواست بھیج کر حکومتِ سندھ و متعلقہ اداروں کی جانب سیوزارتِ ریلوے حکومتِ پاکستان سے 20 کلو میٹر ٹریک پر ٹرائل ٹرین کو چلانے کے لئے رابطہ کیا جائے گا۔

انہوں نے تمام ڈپٹی کمشنرز کو ہدایت دیں کہ اپنے اپنے علاقوں میں50 /50 فٹ کے اندر اپنے آپریشن کوجاری رکھتے ہوئی/100 120 فٹ تک بھی ٹریک کومحفوظ بنانے کے لئے اقدامات کریںاور آپریشن کا آغاز اپنے پلان اور حکمتِ عملی کے ساتھ جاری رکھیں نیز حائل آنے والی عمارتوں اور آبادیوں کا خیال رکھتے ہوئے قا نونی طور پر انہیں مسمار/ منہدم کرنے کے لئے ٹھوس بنیادوں پر ڈرافٹ تیار کر کے 45 دن کا قانونی نوٹس دینے کے لئے مشاورت کریں اور تمام غیر قانونی آبادیوں کو صاف کر نے کے لئے سپریم کورٹ کے احکامات کی روشنی میں کام کریں مسائل کی نشاندہی کرتے ہوئے بھی اپنی حکمتِ عملی وضع کریںاور تمام صاف علاقی/ ٹریک کو محفوظ بناتے ہوئے اسسٹنٹ کمشنرز، پولیس و اینٹی اینکروچمینٹ اہل کار اپنی نگرانی جاری رکھیں۔

اجلاس میں ڈی ایس ریلوے مظہر علی شاہ نے بتایا کہ پوری ٹیم ٹیم ورک کے ساتھ سپریم کورٹ کے فیصلے کی روشنی میں روزانہ کی بنیاد پر رپورٹ روانہ کر تی ہیاور9 جون سے قبل واضع طور پر کراچی سرکلر ریلوے ٹریک صاف کرالیا جائے گا۔ ٹرائل ٹرین کے لئے پالیسی گائیڈ لائین کی روشنی میں عمل کیاجا ئے گا۔ حکو تِ سندھ باضابطہ طور وفاقی حکومتِ و وزارت ر یلوے سے رابطہ کریں۔

ڈی آ ئی جی آپریشن اظہر ر شید خان نے بھی بتایا کہ ریلو ے پو لیس ڈویزنل و ضلعی انتظامیہ کے بھر پور تعاون سے آپریشن کررہا ہے اور مستقبل میں دوبارہ قائم نہ ہونے کے لئے اپنی حکمتِ عملی بھی واضع کر لی ہے ۔ ڈی سی ایسٹ احمد علی صدیقی نے بتایا کہ ضلع میں آپریشن جاری ہے اور فیصلے کی روشنی میں قانونی نوٹس ڈرافٹ کرکے ا س پر کام کرنے کے بعد آبادیوں کو45 دن کا نوٹس دینے کیلیے اخبارات میں شائع کرانے کے لئے بھی قانونی مشاورت سے کام لیںگے۔

ڈی سی ویسٹ زاہد میمن نے بتایا کہ ضلع میں 7.5 کلو میٹر سی4.5 کلو میٹرخا لی کرالیا گیا ہے باقی ماندہ بھی فیصلے کی روشنی میں آپریشن شروع کرنے کے لئے بالکل تیار ہیں۔ ایڈیشنل کمشنر سینٹرل کمال حکیم نے بتایا کہ9 دن کے آپریشن کا (آج) جمعرات سے ضلع میں آپریشن کا آغاز کیا جارہا ہے بغیر مداخلت کی آبادیوں کو مسمار کرنے کے لئے حکمتِ عملی پر کام کریںگے۔

میونسپل کمشنر ڈاکٹر سیف لرحمان نے کہا کہ حکومت کو مقررہ ہدف کی روشنی میں کام کرنا ہے اور قانونی طریقہ سے عملدرامدکرانے کے لئے ٹیم ورک کی ضرورت ہے اور اس وقت جو جوش ہے اس کے تحت ٓآپریشن کا اختتام ہونا ہے، بحالی کے پلان پر مکمل عملدرٓمد کے لئے تمام پہلووں کا جائزہ لیا جائے۔کمشنر کراچی افتخار شالوانی نے کہا کہ9 جون کو سپریم کورٹ کو جامع ومکمل رپورٹ دینے کے لئے تمام اسٹعک ہولڈرز نے مشترکہ حکمت عملی وضع کی ہے اور مقررہ ہدف کے اندر کراچی سرکلر ریلوے کی بحالی کو یقینی بنانے کے لئے ٹھوس اقدامات کررہے ہیں۔

کراچی شہر میں شائع ہونے والی مزید خبریں:

Your Thoughts and Comments