لاہور کے گریٹر اقبال پارک میں 14 سالہ لڑکی کو مبینہ زیادتی کا نشانہ بنا دیا گیا

لڑکی کے والد کی مدعیت میں مقدمہ درج ، ملزم کو گرفتار کرکے قانونی کاروائی شروع کردی گئی ۔پولیس

sanaullah nagra ثنااللہ ناگرہ اتوار ستمبر 21:21

لاہور کے گریٹر اقبال پارک میں 14 سالہ لڑکی کو مبینہ زیادتی کا نشانہ بنا ..
لاہور(اردوپوائنٹ اخبارتازہ ترین۔20 ستمبر2020ء) صوبائی دارلحکومت لاہور کے گریٹر اقبال پارک میں 14 سالہ لڑکی کو مبینہ زیادتی کا نشانہ بنا دیا گیا، پولیس نے لڑکی کے والد کی مدعیت میں مقدمہ درج کرلیا ، جبکہ ملزم کو گرفتار کرکے قانونی کاروائی شروع کردی ہے۔ تفصیلات کے مطابق پاکستان کے پسماندہ علاقے ہی نہیں بلکہ پوش اور بڑے شہروں میں بھی جنسی زیادتی ، تشدد، قتل کے واقعات عام ہو رہے ہیں، جبکہ مقدمات درج ہونے کے باوجود ملزمان عدالتوں سے رہا ہوجاتے ہیں۔

موٹروے زیادتی کیس کے بعد پاکستان کے مختلف شہروں میں زیادتی اور قتل کے واقعات کی تعداد بڑھ بڑھ گئی ہے، ایسے واقعات جو پہلے پوشیدہ ہوتے لیکن میڈیا ان واقعات کو قانون نافذ کرنے والے اداروں کے سامنے لا رہا ہے۔

(جاری ہے)

آج ایک زیادتی کا واقعہ لاہور کے گریٹر اقبال پارک میں پیش آیا ہے، جہاں پر ملزم اپنے ساتھ 14سالہ لڑکی کو ورغلا کر پارک میں لایا ، اور وہاں پر مبینہ طور پر اپنی شیطانی حوس کا نشانہ بنادیا۔

بعد میں لڑکا لڑکی کو رات گزارنے کیلئے پناہ گاہ میں لے گیا، جہاں پر انتظامیہ نے دونوں کو مشکوک سمجھااور پولیس کو اطلاع دے دی۔ پولیس نے پناہ گاہ پہنچ کر لڑکے کو حراست میں لے لیا ہے۔ لڑکی نے ابتدائی بیان دیا کہ لڑکا اس کو ورغلا کر پارک لے گیا تھا جہاں پر لڑکے نے اس سے زیادتی کی ۔ بتایا گیا ہے کہ پولیس نے لڑکی کے والد کی مدعیت میں مقدمہ درج کرلیا ہے، جبکہ متاثرہ لڑکی کا میڈیکل کروایا گیا ہے، لڑکی کی میڈیکل رپورٹ کے بعد ملزم کے خلاف مزید کاروائی کی جائے گی۔

اسی طرح گزشتہ روز بھی اسلحے کے زور 17 سالہ لڑکی کو زیادتی کا نشانہ بنانے کا واقعہ پیش آیا۔ تین مسلح درندوں نے لڑکی سے اجتماعی زیادتی کی۔ پولیس نے لڑکی کے والد محمد ایوب کی مدعیت میں مقدمہ درج کرلیا ہے۔ ایف آئی آر میں بتایا گیا کہ لڑکی کو محمدعلی اور اس کے 2 ساتھیوں نے اسلحہ کے زور پر زیادتی کا نشانہ بنایا۔ پولیس نے ملزمان کی گرفتاری کیلئے قانونی کاروائی شروع کردی ہے۔

اسی طرح سرحدی علاقہ برکی میں بھی بچے کو زیادتی کا نشانہ بنانے والے ملزم کو پولیس نے گرفتار کر لیاگیا۔ پولیس کے مطابق ملزم عبد لرحمن نے مدرسے پڑھنے کے لیے جانے والے بچے کے ساتھ بدفعلی کی تھی، بچے کے گھر بتانے پر ملزم کے خلاف مقدمہ درج کر کے فوری گرفتار کر لیا گیا ہے، ملزم کی گرفتاری کے لئے ایس ایچ او سجاد بٹ کی سربراہی میں خصوصی ٹیم تشکیل دی گئی جس نے ملزم کو گرفتار کیا۔

ایس پی کینٹ کا کہنا تھا کہ بچوں کیساتھ زیادتی اور نازیبا حرکات میں ملوث عناصر کے خلاف سخت کارروائی کی جائے گی۔ زیادتی کا ایک واقعہ بہاولنگر میں پیش آیا، جہاں چک نمبر 185/7Rعلاقہ تھانہ کھچی والا میں پانچ سالہ معصوم بچے کے ساتھ زیادتی کی کوشش کے واقعہ پر فوری نوٹس لیتے ہوئے ڈسٹرکٹ پولیس آفیسر قدوس بیگ نے ملزم کی گرفتاری کے لیے ایس ایچ او تھانہ کھچی والا افتخار نذیر سوہل کی سربراہی میں ٹیم تشکیل دی۔

پولیس ٹیم نے ایک گھنٹے کے قلیل وقت میں جدید طریقہ تفتیش اور ٹیکنالوجی کی مدد سے ملزم محمدکاشف کو گرفتار کرلیا۔ ملزم 4/5 سالہ معصوم بچے کے ساتھ زیادتی کی کوشش کررہاتھا جو اہل علاقہ کے پہنچنے پر موقع سے فرارہوگیا۔ اس موقع پر ڈی پی او بہاولنگر قدوس بیگ نے ورثاء کوانصاف کی یقین دہانی کرواتے ہوئے کہا کہ مقدمہ کی تفتیش میرٹ پر جاری ہے۔ ڈی پی او بہاولنگر نے مزید کہا کہ جنسی جرائم کے روک تھام کے لیے ضروری ہے کہ ایسے جرائم میں ملوث ملزمان کو کیفرکردار تک پہنچایا جائے۔

لاہور شہر میں شائع ہونے والی مزید خبریں:

Your Thoughts and Comments