دوران حراست ہلاکت پر زیرو ٹالرینس کے تحت ذمہ داران کے خلاف فوری محکمانہ و قانونی کارروائی میں تاخیر نہ کی جائے‘ آئی جی پنجاب

صوبہ بھر میں دوران حراست ہلاکت کے مقدمات اور ان کی تفتیش کے بارے تازہ ترین پراگریس رپورٹ سی پی او بھجوائی جائے‘ انعام غنی آئی جی پنجاب کی زیر صدارت سی پی او میں آر پی اوز کانفرنس اور قربان لائنز کے ماسٹرڈویلپمنٹ پلان بارے اجلاس

منگل نومبر 21:58

دوران حراست ہلاکت پر زیرو ٹالرینس کے تحت ذمہ داران کے خلاف فوری محکمانہ ..
لاہور(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین - این این آئی۔ 24 نومبر2020ء) انسپکٹر جنرل پولیس پنجاب انعام غنی نے کہا ہے کہ دوران حراست تشدد یا ہلاکت کے واقعات کسی صورت قابل قبول نہیں ، ایسے واقعات کے ذمہ داران کے خلاف زیرو ٹالرینس کے تحت فوری محکمانہ اور قانونی کاروائی میں ہرگز تاخیرنہ کی جائے کیونکہ ان چند کالی بھیڑوں کی وجہ سے پوری پولیس فورس اور محکمے کو تنقید کا سامنا کرنا پڑتا ہے۔

انہوں نے مزیدکہاکہ صوبے کے تمام اضلاع میں دوران حراست ہلاکت پر درج ہونے والے مقدمات اور انکی تفتیش بارے تازہ ترین پراگریس رپورٹ ایک ہفتے کے اندر سنٹرل پولیس آفس بھجوائی جائے جبکہ دوران حراست ہلاکت کے واقعات پر فرانزک رپورٹ کے ساتھ ساتھ انٹرنل اکائونٹیبلٹی برانچ( آئی اے بی) کی انکوائری رپورٹ پرکارروائی ضرور کی جائے۔

(جاری ہے)

انہوں نے مزیدکہاکہ تمام آر پی اوز اور ڈی پی اوز اپنے زیر انتظا م اضلاع کے تھانوں اور پولیس دفاتر کے انسپکشن کے عمل میں تیزی لائیں اور جس تھانے میں دوران حراست ہلاکت کا واقعہ پیش آئے وہاں یہ ضرور چیک کیا جائے کہ ڈی پی او یامتعلقہ سرکل افسرنے آخری انسپکشن کب کی تھی اور انسپکشن میں تاخیر پر ذمہ دار افسران سے جواب طلبی کی جائے ۔

انہوں نے مزیدکہاکہ صوبے کے کسی بھی ضلع میں ہونے والے سنگین جرم یا بڑے واقعہ کی اطلاع ڈی پی او ، سپیشل برانچ یا کسی اور ذرائع کی بجائے آر پی او کی طرف سے مجھے آنی چاہئیے ۔ انہوں نے مزیدکہاکہ قربان پولیس لائنز کا ماسٹر ڈویلپمنٹ پلان ’’ کم خرچ بالا نشیں ‘‘ کے اصول کے تحت فائنل کیا جائے جس میں پولیس دفاتر اور نئے تعمیر ہونے والے رہائشی بلاک کے ڈیزائن اور نقشے کی تیار ی کا کام تجربہ کار آرٹیٹیکٹ کی مدد سے انتہائی باریک بینی کے ساتھ سر انجام دیا جائے تاکہ دستیاب وسائل سے بہتر سے بہتر استفادہ کیا جائے۔

انہوں نے مزیدکہاکہ نئے رہائشی بلاک اور دفاتر کی تعمیرکے ماسٹر پلان کی تیاری میں تجربہ کار کنسلٹنٹ سے مشاورت کی جائے جبکہ ماسٹر پلان میں جامع حکمت عملی کے تحت پولیس دفاتر اور رہائشی بلاک کی پارکنگ اور ٹریفک مینجمنٹ کوبطور خاص مد نظر رکھا جائے تاکہ مستقبل میںاس حوالے سے پریشانی کا سامنانہ کرنا پڑے ۔انہوں نے مزیدکہاکہ قربان پولیس لائنزکی جدید تقاضوں کے مطابق اپ گریڈیشن اور ڈویلپمنٹ کیلئے پلاننگ کا کام جلد از جلد مکمل کیا جائے تاکہ ڈیزائن کردہ نئے پراجیکٹس کی تکمیل کیلئے عملی اقدامات جلد شروع کئے جاسکیں۔

انہوں نے مزیدکہاکہ صوبے کے تمام اضلاع میںپنجاب پولیس کے افسران و اہلکار منظور شدہ ڈیزائن کے عین مطابق یونیفارم پہنیں جبکہ یونیفارم کے ساتھ آویزاں کئے گئے ہررینک کے بیجز کا منظور شدہ ڈیزائن کے مطابق ہونا بھی ضروری ہے۔ انہوں نے مزیدکہاکہ جو افسران اور اہلکاردوران ڈیوٹی منظور شدہ ڈیزائن کے برعکس یونیفارم اور رینک بیجز کا استعمال کرتے ہیں انکے خلاف محکمانہ کاروائی میں تاخیر نہ کی جائے ۔

ان خیالات کا اظہار انہوں نے آج سنٹرل پولیس آفس میںآر پی اوز کانفرنس کی صدارت اور قربان پولیس لائنزکے ماسٹرڈویلپمنٹ پلان بارے اجلاس کی صدارت کے دوران افسران کو ہدایات دیتے ہوئے کیا ۔آر پی اوز کانفرنس میں ایڈیشنل آئی جی آپریشنز انعام غنی ، ایڈیشنل آئی جی آئی اے بی غلام رسول زاہد، صوبے کے تمام آر پی اوز اور ڈی آئی جی آپریشنز لاہور اشفاق احمد خان موجود تھے جبکہ قربان لائنز ماسٹر پلان اجلاس میں ایڈیشنل آئی جی اسٹیبلشمنٹ اظہر حمید کھوکھر، ایڈیشنل آئی جی لاجسٹکس علی عامر ملک، ایڈیشنل آئی جی پی ایچ پی شاہد حنیف، ایڈیشنل آئی جی ٹریننگ کنور شاہ رخ، ایڈیشنل آئی جی آئی اے بی غلام رسول زاہد،ایڈیشنل آئی جی انویسٹی گیشن فیاض احمددیو، ایڈیشنل آئی جی آپریشنز صاحبزادہ شہزاد سلطان، ڈی آئی جی لیگل جواد احمد ڈوگر، ایس ایس پی ٹیلی کمیونیکیشن صادق علی ڈوگرسمیت دیگر افسران بھی موجود تھے۔

لاہور شہر میں شائع ہونے والی مزید خبریں:

Your Thoughts and Comments