شمالی کوریا امریکہ کے نئے صدر کو ”امریکہ تک مار کرنے والے نئے میزائل“ سے ویلکم کہیں گے

ابامہ اور ٹرمپ کے بعد جوبائیڈن کے صدر بننے پر بھی شمالی کوریا میزائل تجربہ کرنے کوتیار

Sajjad Qadir سجاد قادر جمعہ نومبر 07:25

شمالی کوریا امریکہ کے نئے صدر کو ”امریکہ تک مار کرنے والے نئے میزائل“ ..
شمالی کوریا (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 26 نومبر2020ء) امریکہ اور شمالی کوریا کے سینگ اس طرح سے اٹکے ہیں کہ الگ ہونے کا نام ہی نہیں لے رہے۔اگرچہ امریکہ اپنی توجہ سینٹرل ایشیا کی طرف کیے ہوئے ہے مگر شمالی کوریا بھی اس کے ذہن سے کبھی محو نہیں ہوا۔شمالی کوریامیں جب سے کم جونگ ان نے قیادت سنبھالی ہے تب سے اب تک ان کے نیوکلیئر ہتھیاروں کی آبیاری میں مسلسل اضافہ ہوتا آ رہا ہے۔

حالانکہ امریکہ نے اس پر کئی سخت پابندی عائد کررکھی ہیں مگر اس کے باوجود بھی شمالہ کوریا نے اپنی رفتار کم نہیں کی۔دیگر کچھ ممالک کی طرح شمالی کوریا نے بھی حالیہ امریکی الیکشن پر کسی قسم کاردعمل نہیں دیااور یہاں تک کہ جوبائیڈن کے الیکشن جیتنے کے بعد سے اب تک خاموش چلا آرہاہے۔ہاں مگر اب نئے سال کی آمد اور اگلے سال کے پہلے مہینے میں جوبائیڈن کے وائٹ ہاﺅس میں پہنچنے سے قبل کم جونگ ان نے اسے تحفہ دینے کا فیصلہ کرلیا ہے۔

(جاری ہے)

اور یہ تحفہ ایک ایسے نیوکلیئر میزائل کے تجربے کا ہے جو کئی مہلک ہتھیار اپنی پیٹھ پر لاد کر شمالی کوریا سے ڈائریکٹ امریکہ پہنچنے کی صلاحت رکھتا ہے۔ذرائع کا کہنا ہے کہ اس خطرناک ترین میزائل کا تجربہ شمالی کوریا اکتوبر کے مہینے میں ہر صورت میں کرے گا تاکہ جوبائیڈن بھی شمالی کوریا کی تیاری سے متعلق ہوشیار ہو جائے۔حیرانی کی بات یہ ہے کہ ابامہ کے الیکشن جیتنے کے بعد 2011میں بھی کم جونگ ان نے اسے ایک نیوکلیئر میزائل تجربے سے ویلکم کیا تھااور 2017میں بھی ڈونلڈ ٹرمپ کو ایسے ہی نیوکلیئر ہتھیار کا تجربہ کر کے خوش آمدید کہا تھااور اب کی بار جوبائیڈن کو خوش آمدید کہنے کے لیے بھی شمالہ کوریا نے ایک اور خطرناک میزائل تیار کر لیا ہے جس کا تجربہ آمدہ دنوں میں ہو جائے گا۔

بات صرف یہ نہیں ہے کہ شمالی کوریا نیوکلیئر ہتھیاروں کی فہرست میں ایک اور میزائل کا اضافہ کرنے جا رہاہے بلکہ تشویش کی بات یہ ہے کہ یہ میزائل اس قدر رینج رکھتا ہے کہ یہ شمالی کوریا سے ڈائریکٹ امریکہ ریاست تک پہنچنے کی صلاحیت رکھتا ہے۔اب دیکھنا یہ ہے کہ امریکہ شمالی کوریا پر لگائی گئی پابندیوں سمیت اس کے ساتھ باہمی تعلق اور تعاون کی کون سی راہ اپناتا ہے۔

لاہور شہر میں شائع ہونے والی مزید خبریں:

Your Thoughts and Comments