چینی کا ریٹ مقرر کرنے کا حکومتی نوٹیفکیشن معطل کرنے کی استدعا مسترد

بدھ 4 اگست 2021 13:42

چینی کا ریٹ مقرر کرنے کا حکومتی نوٹیفکیشن معطل کرنے کی استدعا مسترد
لاہور(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین - این این آئی۔ 04 اگست2021ء) لاہورہائیکورٹ نے چینی کا ریٹ مقرر کرنے کا حکومتی نوٹیفکیشن معطل کرنے کی استدعا مسترد کرتے ہوئے تمام درخواستیں یکجا کرکے مرکزی کیس کے ساتھ سماعت کے لئے مقرر کرنے اور شورٹی بانڈز کے عوض شوگر ملز مالکا ن کیخلاف تادیبی کارروائی سے روک دیا۔لاہورہائیکورٹ کے جسٹس شمس محمود مرزا نے شوگرز ملز مالکان کی درخواستوں پر محفوظ کیا گیا فیصلہ جاری کیا۔

فیصلے میں عدالت نے درخواستوں کو باقاعدہ سماعت کے لئے منظور کرتے ہوئے پنجاب حکومت سمیت دیگر فریقین سے جواب طلب کرلیا۔عدالت کا کین کمشنر کو شوگر ملز کی چینی کی سپلائی کا ریکارڈ مکمل رکھنے کا حکم دیا ہے۔عدالت نے چینی کی 89.50 روہے قیمت مقرر کرنے کا حکومتی نوٹیفکیشن معطل کرنے کی استدعا مسترد کردی۔

(جاری ہے)

وفاقی حکومت کی جانب سے ڈپٹی اٹارنی جنرل آف پاکستان اسد علی باجوہ پیش ہوئے اور انہوں نے عدالت کو آگاہ کیا کہ ہائیکورٹ کے حکم کے مطابق چینی کی قیمت مقرر کرنے کے لئے شوگز ملز مالکان کو نوٹس جاری کیے گئے ۔

درخواست گزار وکلا کی جانب سے موقف اختیار کیا گیا کہ ہائیکورٹ نے چینی کا ریٹ مختص کرنے سے قبل شوگرز ملز مالکان کا موقف سننے کا حکم دیا تھا۔عدالتی حکم کے باجود ہمیں سنا ہی نہیں گیاحکومت کی جانب سے چینی کی نئی قیمت 89.50 روپے مقرر کی ,اس قیمت پر چینی فروخت کرنا ممکن نہیں۔عدالت نے اپنے سابقہ تحریری حکم میں تمام فریقین کو سننے کاحکم دیا۔درخواست گزاروں کی جانب سے استدعا کی گئی کہ عدالت چینی کی قیمت 89.50 روہے مقرر کرنے کا حکومتی نوٹیفکیشن کالعدم قرار دے۔عدالت سے مزید استدعا کی گئی کہ درخواست کے حتمی فیصلے تک چینی کی نئی قیمت مقرر کرنے کے نوٹیفکیشن پر عمل درآمد روکنے کا حکم دے۔

لاہور شہر میں شائع ہونے والی مزید خبریں:

Your Thoughts and Comments