اُردو پوائنٹ پاکستان لاہورلاہور کی خبریںحکومت مقامی ایل پی جی انڈسٹری کو بچانے کے لیے اقدامات اٹھائے ‘فاروق ..

حکومت مقامی ایل پی جی انڈسٹری کو بچانے کے لیے اقدامات اٹھائے ‘فاروق افتخار

ایل پی جی کے مقامی پروڈیوسرز کی پیداواری لاگت بہت زیادہ ہونے کی وجہ سے درآمد شدہ گھٹیا معیار کی ایل پی جی سستے داموں فروخت ہورہی ہے

لاہور(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔یکم جنوری۔2016ء ) ایل پی جی ایسوسی ایشن آف پاکستان نے سوئی سدرن گیس کمپنی کے ٹرمینل کے ذریعے غیر معیاری ایل پی جی کی درآمد پر گہری تشویش کا اظہار کرتے ہوئے حکومت پر زور دیا ہے کہ وہ اس صورتحال کا نوٹس لے اور مقامی ایل پی جی انڈسٹری کو بچانے کے لیے اقدامات اٹھائے جو سمگلنگ اور گھٹیا معیار کی زہریلی ایل پی جی کی درآمد کی وجہ سے تباہی کے دہانے پر کھڑی ہے۔

ایک بیان میں ایل پی جی ایسوسی ایشن آف پاکستان کے چیئرمین فاروق افتخار نے کہا کہ وزارت پٹرولیم مقامی ایل پی جی انڈسٹری کے تحفظ کے لیے ٹھوس اقدامات اٹھائے کیونکہ نہ صرف اس سے ان گنت خاندانوں کا روزگار وابستہ ہے بلکہ یہ حکومت کے لیے محاصل کا بھی ایک بڑا ذریعہ ہے۔ فاروق افتخار نے کہا کہ کچھ مفاد پرست امپورٹرز گھٹیا معیار کی ایل پی جی سستے داموں بیچ کر لوگوں کی جانوں سے کھیل رہے ہیں کیونکہ اس ایل پی جی میں تیزی سے آگ پکڑنے والے زہریلے کیمیکلز کی ملاوٹ کی گئی ہے جبکہ اس سے قومی خزانے کو بھی بھاری نقصان ہورہا ہے۔

(خبر جاری ہے)

انہوں نے کہا کہ ایل پی جی کے مقامی پروڈیوسرز کی پیداواری لاگت بہت زیادہ ہونے کی وجہ سے درآمد شدہ گھٹیا معیار کی ایل پی جی سستے داموں فروخت ہورہی ہے لہذا حکومت کو مقامی پروڈیوسرز کی پیداواری لاگت میں کمی لانے کے لیے بھی اقدامات اٹھانے چاہئیں۔ انہوں نے کہا کہ حکومت کو اس صورتحال کا نوٹس لینا چاہیے اور مقامی پروڈیوسرز کی حوصلہ افزائی کرنے کے لیے پیداواری لاگت کم کرنی چاہیے بصورت دیگر زہریلے کیمیکلز کی ملاوٹ شدہ ایل پی جی کی وجہ سے انتہائی قیمتی انسانی جانیں ضائع ہوسکتی ہیں۔


اپنی رائے کا اظہار کریں -

لاہور شہر کی مزید خبریں