سانحہِ ساہیوال کیس، مقتول خلیل کے بھائی اور بچوں کا ملزمان کی شناخت سے انکار، سماعت 13 ستمبر تک ملتوی

بدھ ستمبر 17:44

لاہور۔11 ستمبر(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین - اے پی پی۔ 11 ستمبر2019ء) لاہور کی انسداد دہشت گردی کی خصوصی عدالت میں دوران سماعت سانحہِ ساہیوال میں مقتولخلیل کے بھائی اور بچوں نے ملزمان کی شناخت کرنے سے انکار کردیا۔ لاہور کی انسداد دہشت گردی کی عدالت نے بدھ کو سانحہ ساہیوال کیس کی سماعت کی۔ اس موقع پرمقدمہ کے ملزمان پولیس اہلکاروں صفدر، احسن، رمضان، سیف اللہ، حسنین اور ناصر نواز کو عدالت کے روبرو پیش کیا گیا، مقتول ذیشان کے بھائی احتشام نے عدالت کے روبرو اپنا بیان ریکارڈ کرایا، مقتول خلیل کے بچوں عمیر، منیبہ اور بھائی جلیل نے بھی بیان ریکارڈ کروادیا جبکہ مقتول خلیل کے بچوں اور بھائی نے ملزمان کو شناخت نہ کرسکنے کا بیان دیا۔

عمیر اور منیبہ کا کہنا تھا کہ وہ گولی چلانے والے اہلکاروں کی شناخت نہیں کرسکتے۔

(جاری ہے)

مقتول کے بھائی جلیل نے بیان دیا کہ وہ موقع پر موجود نہیں تھا۔ عدالت نے مزید گواہوں کو شہادتوں کے لیے طلب کرتے ہوئے کیس کی مزید سماعت 13 ستمبر تک ملتوی کردی۔ یاد رہے کہ رواں سال جنوری کی سہ پہر پولیس کے محکمہ انسداد دہشت گردی (سی ٹی ڈی) نے ساہیوال کے قریب جی ٹی روڈ پر مشکو ک مقابلے کے دوران گاڑی پر اندھا دھند فائرنگ کردی تھی جس کے نتیجے میں ایک عام شہری خلیل، اس کی اہلیہ اور 13 سالہ بیٹی سمیت 4 افراد جاں بحق اور 3 بچے زخمی ہوگئے جبکہ 3 مبینہ دہشت گردوں کے فرار ہونے کا دعویٰ کیا گیا۔

لاہور شہر میں شائع ہونے والی مزید خبریں:

Your Thoughts and Comments