چوتھے قومی چیلنج برائے کمیونٹی ایمرجنسی رسپانس ٹیمز کا ایمرجنسی سروسز اکیڈمی میں آغاز ہو گیا

بدھ دسمبر 23:30

لاہور(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین - این این آئی۔ 02 دسمبر2020ء) کمیونٹی ایمرجنسی رسپانس ٹیموں کی پیشہ ورانہ استعداد کارکو بہتر بنانے اور پنجاب میں سیفٹی کلچر کو فروغ دینے کے لئے ایمرجنسی سروسز اکیڈمی میںچوتھا قومی چیلنج برائے کمیونٹی ایمرجنسی رسپانس ٹیم کا آغازکر دیا گیا۔ آپریشنل گنجائش، حادثات وسانحات میںرسپانس کی مہارت اور مقامی سطح پر ٹیموں میں ہم آہنگی کو بہتر بنانے کے لئے بانی ڈائریکٹر جنرل پنجاب ایمرجنسی سروس کی ہدایت پر یہ انوکھی سرگرمی پہلی بار 2017 میں شروع کی گئی تھی۔

کمیونٹی ایمرجنسی رسپانس ٹیموں / رضاکاروں پر مشتمل کل 39ٹیموں میں سے پہلے دن تیرہ ٹیموں جن میں لاہور ، ننکانہ صاحب ، سیالکوٹ ، وہاڑی، چنیوٹ ، ساہیوال ، نارووال ، حافظ آباد ، ٹی ٹی سنگھ ، سیالکوٹ وارڈن ، جہلم، پاکپتن اور سرگودھا نے نے حصہ لیا ۔

(جاری ہے)

دوسرے دن چودہ ٹیمں بشمول اوکاڑہ ، میانوالی، خوشاب، شیخوپورہ، فیصل آباد ، جھنگ، چکوال، اٹک، قصور، خانیوال، گفٹ یوینورسٹی حصہ لیں گی جبکہ تیسرے اور آخری روز باقی اضلاع جن میں ڈی جی خان، مظفرگڑھ، راجن پور، لیہ، ملتان، بہاولپور ، رحیم یار خان ، بہاولپور، لودھراں ، راولپنڈی ، بھکر، خیبرپختوخواں اور فوکس پر مشتمل ٹیمں حصہ لیں گی۔

ڈائریکٹر جنرل پنجاب ایمرجنسی ڈاکٹر رضوان نصیر نے اس چیلنج کا رسمی طور پر افتتاح کیا۔ افتتاحی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ رضا کار ہمارے حقیقی ہیرو ہیں جو ایمرجنسی مینجمنٹ اورسیفٹی کلچر کو فروغ دینے میںاہم کردار ادا کرتے ہیں۔ انہوں نے کوویڈ 19 کے دوران راشن کی تقسیم اوراس آفت سے متعلق لوگوں کو آگاہی دینے کیلئے ان کی خدمات کا بھی اعتراف کیا۔

انہوں نے یونین کونسل کی سطح پر مقابلہ کی فاتح ٹیمیں بننے اور قومی کمیونٹی ایمرجنسی رسپانس ٹیمز چیلنج میں اپنے ضلع کی نمائندگی کرنے والی تمام ٹیموں کو مبارکباد دی۔انہوں نے اس بات پر زور دیتے ہوئے کہا کہ مقابلوں میں حصہ لینے والے تمام رضاکار ہر مقابلہ جاتی سرگرمی کی انجام دہی کے دوران لازمی طور پر ماسک اور گلوز کا استعمال کریں اور ہر مقابلے کے اختتام پر جراثیم کش محلول سے ہاتھوں کو صاف کریں تاکہ وبائی مرض سے محفوظ رہ سکیں۔ انہوں نے "ریسکیو سکائوٹس " کو ترغیب دی کہ "ریسکیو کیڈٹ کور-" ایپ کو ڈائونلوڈ کریں اور اس کے ذریعے خود بھی رجسٹرڈ ہوں اور دوسرے لوگوں کو بھی اس ایپ کے ذریعے ریسکیورضاکاربننے کی دعوت دیں۔

لاہور شہر میں شائع ہونے والی مزید خبریں:

Your Thoughts and Comments