ہائیکورٹ نے حکومت کو شوگر ملز سے چینی کا اسٹاک زبردستی اٹھانے اورہراساں کرنے سے روکدیا

جسٹس ساجد محمود سیٹھی نے ابتدائی سماعت کے بعد کیس مزید سماعت کے لیے جسٹس شاہد جمیل خان کی عدالت کو بھجوا دیا

پیر 27 ستمبر 2021 23:08

لاہور (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین - این این آئی۔ 27 ستمبر2021ء) لاہو رہائیکورٹ نے حکومت کو شوگر ملز سے چینی کا اسٹاک زبردستی اٹھانے سے روکتے ہوئے حکم جاری کیا ہے کہ شوگر ملز کو ہراساں نہ کیا جائے۔لاہور ہائیکورٹ کے جسٹس ساجد محمود سیٹھی نے جہانگیر ترین کی جے ڈی ڈبلیو مل سمیت دیگر شوگر ملز کی درخواستوں پر سماعت کی۔عدالت نے پنجاب حکومت کو شوگر ملز سے چینی کا اسٹاک اٹھانے سے تا حکم ثانی روک دیا اور ہدایت کی کہ حکومت شوگر ملز کے خلاف تادیبی کاروائی نہ کی جائے۔

(جاری ہے)

ابتدائی سماعت کے بعد جسٹس ساجد محمود سیٹھی نے کیس مزید سماعت کے لیے جسٹس شاہد جمیل خان کی عدالت کو بھجوا دیا۔فاضل عدالت نے قرار دیا کہ شوگر ملز کے کیسز جسٹس شاہد جمیل سن رہے ہیں اس لیے مناسب ہے یہ کیسز بھی وہی سنیں۔درخواست گزاروں نے موقف اختیار کیا کہ لاہور ہائیکورٹ کے حکم پر ہمارا معاملہ سیکرٹری خوارک کے پاس زیر سماعت ہے، یہ معاملہ وزارت خوارک کی ایپلٹ کمیٹی کے پاس ہوتے ہوئے بھی ڈپٹی کمشنر نے حکم جاری کیا، جس پر 1288میٹرک ٹن چینی شوگر ملز سے اٹھانے کا نوٹیفکیشن جاری کر دیا گیا ہے جو غیر قانونی ہے۔درخواست گزاروں نے استدعا کی کہ عدالت ڈپٹی کمشنر کے شوگر ملز سے زبردستی چینی اسٹاک اٹھانے کے احکامات کو کالعدم قرار دے۔

لاہور شہر میں شائع ہونے والی مزید خبریں:

Your Thoughts and Comments