حکومت کے دہشت گردوں کی کمرتوڑنے کے دعوے اخباروں تک محدود ہیں،پشتونخوا ملی عوامی پارٹی

منگل اکتوبر 23:44

کوئٹہ (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین - آن لائن۔ 27 اکتوبر2020ء) پشتونخواملی عوامی پارٹی کے صوبائی سیکرٹریٹ کے جاری کردہ بیان میں پشاور کے مسجد میں ہونیوالے بم دھماکے جس میں 8افراد کی شہادت اور 110سے زائد افرادکے زخمی ہونے کے انسانیت سوز ، وحشت وبربریت پر مبنی واقعہ کی شدید الفاظ میں مذمت کرتے ہوئے اسے حکومت اور قانون نافذ کرنیوالے اداروں کی بدترین ناکامی قرار دیا ہے ۔

بیان میں کہا گیا ہے کہ گزشتہ روز کوئٹہ اور پشاور میں ہونیوالے دہشتگردی کے واقعات کی جتنی بھی مذمت کی جائے و ہ کم ہے کوئٹہ اور پشاور میں دہشتگردی کے خدشات کے حوالے سے اداروں اور بعض حکومتی وزراء وترجمانوں کی جانب سے دہشتگردی کے اشارے اور واقعات کا ہونا اورحکومتی معلومات کے باوجود دہشتگردوں کے ٹھکانوں پرپہنچنا عوام کیلئے سوالیہ نشان ہیں بیان میں کہا گیا ہے کہ کہ حکومتی کی جانب سے دہشتگردوں کی کمر توڑنے اور انہیں ختم کرنے کے دعوے محض اخباری بیانات تھے ۔

(جاری ہے)

اگر دہشتگردوں کی کمر توڑ کر رکھی جاتی تو گزشتہ 2سالوں میں پشتونخوا وطن بالخصوص جنوبی پشتونخوا میں کہیں دہشتگردی کے واقعات تواتر کے ساتھ ہوئے جن میں لورالائی پولیس سینٹر پر حملہ ، پروفیسر ارمان لونی کی شہادت ، قلعہ سیف اللہ میں لیویز آفیسر وسپاہیوں کی شہادت ، پشین میں لیویز آفیسر وسپاہیوں کی شہادت کا واقعہ، سنجاوی میں لیویز سپاہیوں کی شہادت کا واقعہ ،ہرنائی میں دہشتگردی کے مختلف واقعات، چمن میں دہشتگری کے مختلف واقعات ، سبی میں مزدوں کی ہلاکتوں کا واقعہ اور کوئٹہ میں مسلسل دہشتگردی کے واقعات بم دھماکوں ، ٹارگٹ کلنگ ، چوری ڈکیتیاں، اغواء برائے تاوان کے واقعات تسلسل کیساتھ جاری ہیں لیکن آج تک مذکورہ بالا تمام واقعات میں ملوث کسی بھی دہشتگرد ، اغواء کار ، ٹارگٹ کلر اور سماج دشمن جرائم پیشہ عناصر کی گرفتاری اور اسے عوام کے سامنے بے نقاب نہیں کیا گیا یہی وجہ ہے کہ دہشتگرد بلاکسی خوف وخطر مسلسل ہمارے عوام اس کا نشانہ بن رہے ہیں۔

بیان میں کہا گیا ہے کہ پشتونخواملی عوامی پارٹی ہر قسم کی دہشتگردی کی شدید الفاظ میں مذمت کرتی ہے اور دہشتگردی کا شکار بننے والوں سے دلی ہمدردی کا اظہار کرتی ہے اورمطالبہ کرتی ہے کہ ملک پر مسلط کیئے جانیوالے نااہل ، ناکام سلیکٹڈ حکومتوں کی ناکام پالیسیوں اور عوام کے سرومال کی تحفظ میں بدترین ناکامی کے باعث ہمارے عوام کا مزید خون بہانے کا سلسلہ بند کیا جائے اور عوام کے سرومال کے تحفظ کو یقینی بنانے کے ساتھ ساتھ صوبے کی اپنی فورسز کو جدید وسائل وتربیت دیکر انہیں عوام کی سیکورٹی کی ذمہ داری سونپی جائے کیونکہ اس پشتون بلوچ صوبے بالخصوص جنوبی پشتونخوا میں تمام قومی ، صوبائی ،علاقائی شاہراہوں پر ہرمقام پر ایف سی کی درجنوں چیک پوسٹیں موجود ہیں جو کہ عوام کی سیکورٹی کی بجائے ان چیک پوسٹوں پر ہمارے عوام کی تضحیک وتذلیل اور رشوت خوری کا بازار گرم کر رکھا ہے ،ان چیک پوسٹوں پر دہشتگردوں اور جرائم پیشہ عناصر کی عدم گرفتاری سے واضح ہے کہ چیک پوسٹیں دہشتگردوں ، جرائم پیشہ عناصر ومسلح عناصر کیلئے نہیں بلکہ عوام کی توہین اور تضحیک کیلئے قائم ہیں جس کا فوری خاتمہ ضروری اور لازمی ہی

کوئٹہ شہر میں شائع ہونے والی مزید خبریں:

Your Thoughts and Comments