وزیراعظم کے دورہ تربت کے موقع پر انتظامات میں کوتاہیاں برتنے پر کئی افسران سے وضاحت طلب

بدھ نومبر 23:03

کوئٹہ(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین - این این آئی۔ 25 نومبر2020ء) چیف سیکرٹری بلوچستان نے وزیراعظم کے دورہ تربت کے موقع پر انتظامات میں کوتاہیاں برتنے پر کمشنر مکران ڈویژن سمیت کئی افسران سے وضاحت طلب کر لی۔چیف سیکرٹری دفترکی جانب سے آڈیٹوریم میں چیف سیکرٹری کی نشست کونے میں رکھنے ڈپٹی کمشنر اور ایس ایس پی پولیس کی جانب سے وزیراعظم کے قریب جانے کی کوشش پر بھی اعتراض اٹھایا گیا ہے۔

چیف سیکرٹری بلوچستان کے دفتر کی جانب سے دورے کے ایک ہفتے بعد 20 نومبر کو کمشنر مکران ڈویژن سمیت دورے کے انتظامات کے پابند کئی دوسرے متعلقہ افسران کو دورے کے موقع پر کوتاہیوں سے متعلق تحریری طور پر وضاحت طلب کی کی گئی ہے سرکاری مراسلے کے مطابق چیف سیکرٹری نے ایڈیشنل سیکرٹری (مانیٹرنگ اینڈ امپلی مینٹیشن ) کے ذریعے کمشنر مکران ڈویژن سے سات دن کے اندر انتظامات میں کوتاہیوں پر تحریری پر جواب جمع کرانے کا کہا ہے۔

(جاری ہے)

مراسلے میں کمشنر مکران ڈویژن کو مخاطب کرتے ہوئے لکھا گیا ہے کہ آپ اس بات کے ذمہ دار تھے کہ چیف سیکرٹری بلوچستان کی جانب سے دی گئی تفصیلی ہدایات پر اس کی روح کے مطابق عملدرآمد کو یقینی بناتے مگر انتظامات میں دس سے زائد امور میں کوتاہیاں کی گئیں۔چیف سیکرٹری کے دفتر نے شکایت کی ہے کہ دورہ تربت میں وزیراعظم اور دیگر مہمانوں کو دوپہرکا کھانا جن پلیٹوں میں پیش کیا گیا وہ کم معیار کے تھے حالانکہ اس بارے میں واضح ہدایات دی گئی تھیں۔

جبکہ وزیراعظم اور دیگر مہمانوں کو پیش کی گئی پیپسی، کوک اور دیگر مشروبات بھی مناسب طور پر ٹھنڈی نہیں تھیں۔واش روم اور صفائی کی صورتحال پر بھی عدم اطمینان کا اظہار کرتے ہوئے کہا گیا کہ راستے اور رواش رومز گندے تھے۔وزیراعظم کو بریفنگ دینے کے لیے پریزینٹیشن روم میں کوئی متبادل لیپ ٹاپ اور یا ڈیسک ٹاپ کمپیوٹر موجود نہیں تھا اور کوئی قابل لیپ ٹاپ یا کمپیوٹر آپریٹر بھی دستیاب نہیں تھا جو سسٹم میں آنے والی پیچیدگیوں کو سنبھال سکتا۔آڈیٹوریم میں جہاں وزیراعظم نے قبائلی عمائدین سے ملاقات کی چیف سیکرٹری کے لیے کوئی کرسی مختص نہیں تھی چیف سیکرٹری کو بالکل کونے میں بیٹھنا پڑا۔ اسی طرح دیگر انتظامی سیکرٹریز کیلئے بھی کرسیاں مارک نہیں کی گئی تھیں۔

متعلقہ عنوان :

کوئٹہ شہر میں شائع ہونے والی مزید خبریں:

Your Thoughts and Comments