تبدیلی کے نام پر تحریک انصاف کو ووٹ دیکر اقتدار کے ایوانوں تک پہنچانے والے عوام غنڈہ اور وحشی صفت قبضہ مافیا کے چنگل سے باہر نہیں نکل سکے،

سمارٹ سٹی ہائوسنگ سوسائٹی کے متاثرہ چک بیلی خان کے رہائشیوں کا موقف

جمعرات جون 00:17

راولپنڈی (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین - آن لائن۔ 12 جون2019ء) تبدیلی کے نام پر تحریک انصاف کو ووٹ دیکر اقتدار کے ایوانوں تک پہنچانے والے عوام غنڈہ اور وحشی صفت قبضہ مافیا کے چنگل سے باہر نہیں نکل سکے ․ اقتدار و اختیار کے ایوانوں سے چند کلو میٹر فاصلے کی دوری پرچک بیلی خان میں ان عناصر نے بے وسیلہ اور لاچار لوگوں کی زمینوں پراسلحہ لہرا کر قبضے شروع کر رکھے ہیں اور لب کشائی کی صورت میں انہیں جان سے مارنے کی نہ صرف دھمکیاں دی جا رہی ہیں بلکہ چار روز قبل ایک عمر رسیدہ متاثرہ خاتون سمیت اس کے تین بیٹوں پر اندھا دھند فائرنگ کی اور ان کے پورے گھر کو گولیوں سے چھلنی کر دیا حتی کہ برتن تک بھی گولیوں سے محفوظ نہ رہے ․ متاثرین نے کہا ہے کہ اگر ہمیں انصاف نہ ملا توعلاقے کے موضعات سے تعلق رکھنے والے ہزاروں لوگ اپنے بیوی بچوں سمیت اسلام آباد کی جانب مارچ کریں گے اور ڈی چوک کے مقام پر دھرنا دیں گے ․ ان خیالات کا اظہارچک بیلی خان کے گائوں کورڑ میال اور ملحقہ موضعات کے رہائشی سینکڑوں لوگوں نے سمارٹ سٹی نامی ہائوسنگ سوسائٹی، اس کے مالکان چوہدری فرخ ، زاہد رفیق اوران کے قمر شاہ نامی فرنٹ مین و دیگر ساتھیوں پر مبنی علاقے کے بدنام زمانہ قبضہ مافیا کے بڑھتے ہوئے مظالم کے خلاف لائحہ عمل مرتب کرنے کیلئے منعقدہ ایک خصوصی اجلاس میں اظہار خیال کرتے ہوئے کیا ․ اپنی زرعی زمین کو مذکورہ مافیا کے قبضہ سے چھڑانے کیلئے آواز بلند کرنے پر حالیہ واقعہ میں قبضہ مافیاکے غنڈوں نے ایک عمر رسیدہ خاتون سمیت اس کے تین بیٹوں پر اندھا دھند فائرنگ کرکے ایک بیٹے کو ٹانگوں سے محروم اور باقی کو زخمی کر دیا․ اہل علاقہ نے کہا کہ ہم نے قبضہ مافیا کے خلاف متعلقہ تھانے میں درخواستیں دے رکھی ہیں اور پولیس ہماری مدد کرنے کے ارادوں کے باوجود اس وقت کمزور ہو جاتی ہے جب با اثر قبضہ مافیا کی سرپرست نا دیدہ قوتیں اپنا اثر دکھاتی ہیں ․پولیس چھاپے سے قبل ہی قبضہ مافیا میں شامل اشتہاریوں کو غائب کر دیا جاتا ہے اور پولیس بغیر کسی گرفتاری کے ناکام واپس لوٹ جاتی ہے ․ قانون اور انصاف کا کھلے عام یہ مذاق اور قتل تحریک انصاف کی حکومت کیلئے ایک چیلنج بن چکا ہے ․ انہو ںنے کہا کہ با اثر قبضہ مافیا کسی خوف اور ڈر کے بغیر چھوٹے چھوٹے کاشتکاروں کی زرعی اراضی پر نشان لگا کر اپنے اسلحہ بردار غنڈے وہاں بٹھا دیتا ہے جنہیں وہاں سے اٹھانے کی غریب اور بے وسیلہ کاشتکار طاقت نہیں رکھتے اور ان کے سامنے ان کی کمائی کا ذریعہ کھیتی باڑی ان سے چھینا جا رہا ہے ․ متاثرہ لوگوں نے کہا کہ وزیر اعظم نے یہ اعلان بھی کر رکھا ہے کہ زرعی زمینوں کو ہائوسنگ کالونیوں میں بدلنے نہیں دیا جا ئے گا یوں یہ قبضہ مافیا جہاں ایک جانب غریب و بے بس کاشتکاروں کی کمائی کا ذریعہ چھین کر ان کی زمینوں پر قبضے کر رہا ہے وہیں وہ زرعی زمینوں کو ہائوسنگ کالونیوں میں بدل کر وزیر اعظم کے مذکورہ اعلان کو بھی چیلنج کر رہا ہے ․ اجلاس میں شریک متاثرہ کاشتکاروں نے وزیر اعظم عمران خان ، علاقے کے رکن قومی اسمبلی و وفاقی وزیر غلام سرور خان ،صوبائی وزیر قانون محمد بشارت راجہ ، چیف جسٹس آف پاکستان اور قانون نافذ کرنے والے اداروں کے سربراہان سے اپیل کی ہے کہ ان کی فوری داد رسی کی جائے اور ان کی چھینی گئی زرعی زمینوں کو قبضہ مافیا سے آزاد کرا کے ان کا روزگار بچایا جائے اجلاس میں فیصلہ کیا کہ اگرایک ہفتے کے اندر حکومت کی جانب سے کوئی قدم نہ اٹھایا گیا تو علاقے کے تمام لوگ ہزاروں کی تعداد میں اپنے خاندانوں سمیت اسلام آباد کی جانب مارچ کریں گے اور ڈی چوک میں دھرنا دیں گے ۔

راولپنڈی شہر میں شائع ہونے والی مزید خبریں:

Your Thoughts and Comments