محکمہ خوراک اور ریونیو کا عملہ ذخیرہ اندوزوں کا کھوج لگائے اور بڑے آپریشن کئے جائیں ، کمشنر سرگودھا

جمعہ مئی 23:10

سرگودھا / لاہور (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین - آن لائن۔ 29 مئی2020ء) کمشنر ڈاکٹر فرح مسعود نے چاروں اضلاع کے ڈپٹی کمشنرز او رمحکمہ خوراک کے افسران پر واضح کیا ہے کہ گندم خریداری مہم کے سو فیصد اہداف کو حاصل کرنے کیلئے اگر انہیں مارکیٹ میں اگلے ڈیڑھ ماہ تک بیٹھ کر ذاتی جیب سے بھی گندم خرید کر لانا پڑی تو لانا ہو گی ۔ محکمہ خوراک اور ریونیو کا عملہ ذخیرہ اندوزوں کا کھوج لگائے اور بڑے آپریشن کئے جائیں ۔

ڈویژن بھر میں ریکارڈ پیداوار ہوئی اور حکومت نے صرف پانچواں حصہ خریدکاہے ۔ سو فیصد ہدف حاصل کرنے تک کسی کو چین سے نہیں بیٹھنے دیا جائیگا ۔ وہ گندم خریداری مہم کے جائزہ اجلاس سے خطاب کررہی تھیں ۔ اجلاس میں چاروں اضلاع کے ڈپٹی کمشنرز ‘ محکمہ خوراک ‘ زراعت کے افسران او راے ڈی سی آر نے شرکت کی ۔

(جاری ہے)

کمشنر نے گھر گھر جا کر تلاشی لے کر کاشتکارکے پاس ضرورت سے زیادہ موجودگندم اٹھا کر خریداری مراکزلانے کی ہدایت کی ۔

انہوں نے کہاکہ محکمہ ریونیو او رخوراک کے عرصہ دراز سے تعینات عملہ کو پتہ ہے کہ کہاں گندم موجود ہے ۔ ناکامی کی صورت میں کسی کے ساتھ کوئی رعایت نہیں ہوگی ۔ انہوں نے چاروں اضلاع میں اگلے دس دنوں میں روزانہ چار فیصد خریداری ہدف حاصل کرنے کیلئے تمام ذرائع کو استعمال میں لانے کی ہدایت کی ۔ انہوں نے چاروں اضلاع میں تقسیم شدہ باردانہ کی سو فیصد واپس کیلئے بھی تمام وسائل استعمال میں لانے کی ضرورت پر زور دیا ۔

انہوں نے ڈویژن بھر کے بڑے کاشتکاروں کی گندم کی کاشت کاریکارڈ مرتب کرنے کی بھی ہدایت کی۔اجلاس میں پرائس کنٹرول مجسٹریٹس کی کارکردگی کا بھی تفصیلی جائزہ لیتے ہوئے کمشنر ڈاکٹر فرح مسعود نے مصنوعی مہنگائی ‘ذخیرہ اندوزوں اورگرانفروشوں کے خلاف منظم مہم چلانے کی ہدایت کی ۔ انہوں نے پرائس کنٹرول مجسٹریٹس کو اپنی کارکردگی میں نکھار لانے کی ضرورت پر زور دیا ۔

انہوں نے واضح کیاکہ جس علاقہ سے پرائس کنٹرول کی زیادہ شکایات موصول ہوں گی ان مجسٹریٹس اور ذمہ داران افسران کے خلاف بھی ضابطہ کے تحت کارروائی کی جائیگی ۔ انہوں نے روزانہ کی بنیاد پر پرائس کنٹرول مجسٹریٹس کو بازاروں ‘ عام مارکیٹوں او رسبزی وفروٹ منڈیوں کے دورے کرنے کی ہدایت کی ۔ انہوں نے لاک ڈاؤن میں حکومت کی جانب سے کاروبار کیلئے مقررکردہ اوقات کار پر بھی سختی سے عمل درآمد کروانے کی ہدایت کرتے ہوئے خلاف ورزی کے مرتکب افراد کیخلاف سخت ایکشن لینے کی بھی ہدایت کی ۔

اجلاس میں ڈائریکٹر ہیلتھ سروسز ڈاکٹر رانا عبداللہ نے کورونا پولیو او رانسداد ڈینگی سے متعلق بریفنگ دی ۔ کمشنر نے افسران پر زور دیا کہ وہ لاک ڈاؤن میں نرمی کے بعد زیادہ متحرک رہیں ۔ کورونا مریضوں کے تعداد میں اضافہ کاخدشہ ہے ۔ انہوں نے زیادہ سے زیادہ ٹیسٹ کرنے ‘ کورونا جنگ میں فرنٹ کا کردار ادا کرنے والے طبی عملہ کیلئے تمام ضروری سامان کی وافر مقدارمیں دستیابی کو یقینی بنانے کی ہدایت کی ۔

اجلاس کو بتایا گیا کہ 2014 سے سرگودہا ڈویژن پولیو فری آرہاہے ۔ رواں سال مارچ میں سرگودہا کے سلانوالی روڈ کے سیوریج میں پولیو وائرس پایا گیا جو تحقیقات میں پتہ چلا کہ سندھ کے پولیو وائرس سے متاثرہ علاقہ سے آنے والی تبلیغی جماعت کے افراد کے استعمال شدہ پانی سے ملا ۔ ضلعی انتظامیہ نے ہنگامی طو رپر 16یونین کونسلوں میں انسداد پولیو مہم چلائی ۔

اس طرح کرک میں پولیو کیس رپورٹ ہونے پر ضلع میانوالی کے ڈی آئی خان باڈر کی یونین کونسلوں میں بھی بچوں کو پولیو سے بچاؤ کے قطرے پلائے گئے ۔ کمشنر ڈاکٹر فرح مسعود نے انسداد ڈینگی سرگرمیوں کاجائزہ لیتے ہوئے ڈپٹی کمشنر کو بہتر سرویلنس کرنے اور ہاٹ سپاٹ کی ہفتہ وار چیکنگ کرنے کی ہدایت کی ۔ انہوں نے انسداد ڈینگی کیلئے تمام ضروری مشینری وسامان کو تیار رکھنے کی ضرورت پرزور دیا ۔ اجلاس میں ٹائیگرفورس کی رضاکارانہ ذمہ داریوں کے حوالے سے بھی تفصیلی جائزہ لیاگیا ۔

سرگودھا شہر میں شائع ہونے والی مزید خبریں:

Your Thoughts and Comments