نیب لاہور نے ٹویوٹا موٹرز گوجرانوالہ کرپشن سکینڈل کے مرکزی ملزمان جاوید مظفر بٹ اور ملک عثمان کو گرفتار کر لیا

جمعرات ستمبر 23:10

سیالکوٹ ۔ (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین - اے پی پی۔ 19 ستمبر2019ء) قومی احتساب بیورو (نیب) لاہور نے ٹویوٹا موٹرز گوجرانوالہ کرپشن سکینڈل کے مرکزی ملزمان جاوید مظفر بٹ اور ملک عثمان کو گرفتار کر لیا۔نیب ترجمان کے مطابق ملزمان نے 2006 میں نئی گاڑیوں کی بکنگ کے نام پر کاروبار کا آغاز کیا اور عوام کو بھاری منافع کا لالچ دیتے ہوئے اربوں روپے وصول کئے۔

ملزمان نے 2015 تا 2019 کے دوران غیرقانونی طور پر 3 ارب روپے سے زائد کی رقوم وصول کی۔ملزمان متاثرین سے گاڑیوں کی مکمل قیمت کے برابر رقم بطور انویسٹمنٹ وصول کرتے رہے جس پر بھاری منافع کے نام پر سبز باغ دکھاتے رہے۔ ترجمان کے مطابق ملزمان کے خلاف نیب لاہور میں کم و بیش 700 متاثرین کی شکایات موصول ہو چکی ہیں۔گوجرانوالہ سے شروع ہونیوالا غیرقانونی کاروبار گجرات، سیالکوٹ، فیصل آباد بعدازاں پورے پنجاب میں پھیل گیا۔

(جاری ہے)

نیب کے مطابق گرفتار ملزمان آپس میں بزنس پارٹنر ہیں اوران کے خلاف دھوکہ دہی سے اوورسیز پاکستانیوں سے بھی سرمایہ حاصل کرنے کی شکایات موصول ہوئیں۔نیب لاہور کی جانب سے دونوں گرفتار ملزمان کو جسمانی ریمانڈ کے حصول کیلئے احتساب عدالت کے روبرو پیش کیا گیا۔دوران تحقیقات میگا سکینڈل میں ملوث دیگر شریک کرداروں کے بے نقاب ہونے کا بھی امکان ہے۔

سیالکوٹ شہر میں شائع ہونے والی مزید خبریں:

Your Thoughts and Comments