سندھ ہائی کورٹ نے صوبے میں سگ گزیدگی واقعات کے داخل مقدمات میں نامزد میونسپل افسران کی گرفتاری کا حکم دے دیا

جمعرات نومبر 21:17

سکھر(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین - این این آئی۔ 26 نومبر2020ء) سندھ ہائی کورٹ نے صوبے میں سگ گزیدگی واقعات کے داخل مقدمات میں نامزد میونسپل افسران کی گرفتاری کا حکم دے دیا،ایس ایس پیز کو ملزمان گرفتار نہ کرنے پر شوکاز نوٹسز جاری،عدالت نے میونسپل افسران کی کتا مار مہم کے حوالیسے پیش کردہ رپورٹ بھی مسترد کردی،سماعت پندرہ دسمبر تک ملتویتفصیلات کے مطابق سندھ ہائی کورٹ سکھر بینچ نے صوبے میں سگ گزیدگی کے بڑھتے ہوئے واقعات کے خلاف داخل آئینی پٹیشن کی سماعت کی سندھ بھر سے میونسپل اور پولیس افسران سماعت پر عدالت میں پیش ہوئے میونسپل افسران نے عدالت میں اپنے اپنے علاقوں میں جاری کتا مار مہم کے حوالیسے رپورٹ پیش کی لیکن عدالت نے میونسپل افسران کی پیش کردہ رپورٹ کوغیرتسلی بخش قرار دیتے ہوئے مسترد کردیا اورپولیس افسران سے سگ گزیدگی کے درج مقدمات اور گرفتاریوں کے حوالے سے تفصیلات طلب کیں تو پولیس کی جانب سے تفصیلات پیش نہ کی جاسکیں جس پر عدالت نے سخت برہمی کا اظہار کیا اور پولیس کو سگ گزیدگی کے حوالے سے داخل مقدمات میں نامزد میونسپل افسران کو فوری طور ہر گرفتارکرنیکاحکم دیا اور مقدمات میں گرفتاریاں نہ کرنے پر سندھ بھرکے ایس ایس پیز کوشوکاز نوٹس جاری کردییے عدالت نے سماعت کے موقع پر پیش نہ ہونے والے میونسپل افسران کے بھی وارنٹ جاری کرنے کا حکم دیا سماعت کیدوران ایک وکیل نے عدالت ک تجویزدی کہ کتوں کے لیے بھی شیلٹر ہاؤسز بنائے جائیں جس پر سندھ ہائی کورٹ سکھر بینچ کے جج جسٹس آفتاب احمد نے ریمارکس دیئیکہ یہاں انسان سڑکوں پر سوتے ہیں اور کتوں کے لیے شیلٹر کی بات کی جارہی ہے انہوں نے مزید ریمارکس دیئے کہ عوام بھوک سے مررہیہیں گندم ہوتے ہوئے ان کو آٹا دستیاب نہیں ہے شیلٹر ہاؤسز کے نام پر افسران کو ایک نیا کھانچہ مل جائے گاعدالت نے بعد ازاں پٹیشن کی سماعت 15 دسمبر تک ملتوی کردی۔

متعلقہ عنوان :

سکھر شہر میں شائع ہونے والی مزید خبریں:

Your Thoughts and Comments