Akhroot Ka Pair Or Aik Nadaan

اخروٹ کا پیڑ اور ایک ناداں

ناداں کوئی اک روز جو جنگل میں گیا

اخروٹ کے باغات کا منظر دیکھا

ہے کتنا بڑا پیڑ تو پھل چھوٹا سا

یہ سوچ کے وہ اور بھی حیران ہوا

اس اتنے بڑے پیڑ پہ ننھا سا پھل

تربوز یہاں ہوتا تو کیا اچھا تھا

تربوز کو دیکھو تو ذرا سی ہے بیل

قدرت نے دکھائے ہیں تماشے کیا کیا

تربوز کہاں اور کہاں یہ اخروٹ

کیا بھید ہے میری نہ سمجھ میں آیا

اس سوچ میں تھا کہ اک ہوا کا جھکڑ

آندھی سا بگولا سا بپھر کر اٹھا

جنگل کے درختوں کو ہلا کر اس نے

اخروٹ کو نادان کے سر پر پھینکا

سر پر پڑا اخروٹ تو چیخا نادان

تربوز جو ہوتا تو میں مر ہی جاتا

حکمت سے کوئی کام نہیں ہے خالی

جس کو بھی جہاں تو نے کیا ہے پیدا

اس کی جگہ اس نے نہیں بہتر کوئی

اب راز یہ میری بھی سمجھ میں آیا

عادل اسیر دہلوی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(553) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Aadil Aseer Dehlvi, Akhroot Ka Pair Or Aik Nadaan in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Nazam, and the type of this Nazam is Social, Hope Urdu Poetry. Also there are 8 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.1 out of 5 stars. Read the Social, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Aadil Aseer Dehlvi.