Khud Mazay Daar Tabiyat Hai To Saman Kaisa

خود مزے دار طبیعت ہے تو ساماں کیسا

خود مزے دار طبیعت ہے تو ساماں کیسا

زخم دل آپ ہیں شورش پہ نمکداں کیسا

ہاتھ وحشت میں نہ پونچھے تو گریباں کیسا

خار صحرا سے نہ الجھے تو وہ داماں کیسا

کوچۂ یار کو دعویٰ ہے کہ جنت میں ہوں

خلد کہتے ہیں کسے روضۂ رضواں کیسا

اسی معبود کا ہے دیر و حرم میں جلوہ

بحث کس بات کی ہے گبر و مسلماں کیسا

وعدۂ بادۂ اطہر کا بھروسہ کب تک

چل کے بھٹی پہ پئیں جرعۂ عرفاں کیسا

ہم ہوئے قیسؔ ہوئے وامقؔ و فرہادؔ ہوئے

زلف پر خم نے کیا سب کو پریشاں کیسا

دور کے ڈھول ہیں یوسف کی کہانی صاحب

کس کو معلوم ہے ہوگا مہ کنعاں کیسا

تیرے قربان میں اتنا تو بتا دے قاتل

میری گردن پہ چلا خنجر براں کیسا

دل کے آئینہ میں تصویر صنم رکھتا ہے

نہیں معلوم کہ آغاؔ ہے مسلماں کیسا

آغا اکبرآبادی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(437) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Aagha Akbarabadi, Khud Mazay Daar Tabiyat Hai To Saman Kaisa in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 42 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.8 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Aagha Akbarabadi.