Kitney Hi Pairr Khauf Khizaa Se Ujar Gaye

کتنے ہی پیڑ خوف خزاں سے اجڑ گئے

آنس معین

کتنے ہی پیڑ خوف خزاں سے اجڑ گئے

آنس معین

MORE BY آنس معین

کتنے ہی پیڑ خوف خزاں سے اجڑ گئے

کچھ برگ سبز وقت سے پہلے ہی جھڑ گئے

کچھ آندھیاں بھی اپنی معاون سفر میں تھیں

تھک کر پڑاؤ ڈالا تو خیمے اکھڑ گئے

اب کے مری شکست میں ان کا بھی ہاتھ ہے

وہ تیر جو کمان کے پنجے میں گڑ گئے

سلجھی تھیں گتھیاں مری دانست میں مگر

حاصل یہ ہے کہ زخموں کے ٹانکے اکھڑ گئے

نروان کیا بس اب تو اماں کی تلاش ہے

تہذیب پھیلنے لگی جنگل سکڑ گئے

اس بند گھر میں کیسے کہوں کیا طلسم ہے

کھولے تھے جتنے قفل وہ ہونٹوں پہ پڑ گئے

بے سلطنت ہوئی ہیں کئی اونچی گردنیں

باہر سروں کے دست تسلط سے دھڑ گئے

آنس معین

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(362) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Aanis Moin, Kitney Hi Pairr Khauf Khizaa Se Ujar Gaye in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad Urdu Poetry. Also there are 38 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.6 out of 5 stars. Read the Sad poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Aanis Moin.