Bahar E Zakhm Lab Atsheen Hui Mujh Se

بہار زخم لب آتشیں ہوئی مجھ سے

بہار زخم لب آتشیں ہوئی مجھ سے

کہانی اور اثر آفریں ہوئی مجھ سے

میں اک ستارہ اچھالا تو نور پھیل گیا

شب فراق یوں ہی دل نشیں ہوئی مجھ سے

گلاب تھا کہ مہکنے لگا مجھے چھو کر

کلائی تھی کہ بہت مرمریں ہوئی مجھ سے

بغل سے سانپ نکالے تو ہو گیا بدنام

خراب اچھی طرح آستیں ہوئی مجھ سے

کہاں سے آئی ہے خوشبو مجھے بھی حیرت ہے

یہ رات کیسے گل یاسمیں ہوئی مجھ سے

میں اپنے پھول کھلائے ہیں اس کی جھاڑی پر

قبائے یار بہت ریشمیں ہوئی مجھ سے

بس ایک بوسہ دیا تھا کسی کے ماتھے پر

تمام شہر کی روشن جبیں ہوئی مجھ سے

غزل سنی تو بہت دل سے خوش ہوا عاطفؔ

مگر غزل کی ستائش نہیں ہوئی مجھ سے

عاطف کمال رانا

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(375) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Aatif Kamal Rana, Bahar E Zakhm Lab Atsheen Hui Mujh Se in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 5 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.8 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Aatif Kamal Rana.