Hasrat Deed Nahi Zouq Tamasha Bhi Nahi

حسرت دید نہیں ذوق تماشا بھی نہیں

حسرت دید نہیں ذوق تماشا بھی نہیں

کاش پتھر ہوں نگاہیں مگر ایسا بھی نہیں

جبر دوزخ نہیں فردوس کا نشہ بھی نہیں

خوش ہیں اعراف میں ہم اور کوئی کھٹکا بھی نہیں

اب کسی حور میں باقی نہیں احساس کشش

میرے سر پر کسی آسیب کا سایہ بھی نہیں

وہ تو ایسا بھی ہے ویسا بھی ہے کیسا ہے مگر؟

کیا غضب ہے کوئی اس شوخ کے جیسا بھی نہیں

جس کا حق تھا کہ بنے سنگ ملامت کا ہدف

زہے تضحیک وہ اب شہر میں رسوا بھی نہیں

ڈھونڈھ کچھ اور ہی ابلاغ کی صورت اے سازؔ

شرح و تفسیر نہیں رمز و کنایہ بھی نہیں

عبد الاحد ساز

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(760) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Abdul Ahad Saaz, Hasrat Deed Nahi Zouq Tamasha Bhi Nahi in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 117 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.6 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Abdul Ahad Saaz.