Lafzon Ke Sehra Mein Kya Maienay Ke Saraab Dikhnana Bhi

لفظوں کے صحرا میں کیا معنی کے سراب دکھانا بھی

لفظوں کے صحرا میں کیا معنی کے سراب دکھانا بھی

کوئی سخن سحابی کوئی نغمہ نخلستانہ بھی

اک مدت سے ہوش و خبر کی خاموشی رائج ہے یہاں

کاش دیار عصر میں گونجے کوئی صدا مستانہ بھی

نپے تلے آہنگ پہ کب تک سنبھل سنبھل کر رقص کریں

کوئی دھن دیوانی کوئی حرکت مجنونانا بھی

شہر سے باہر کہساروں کے بیچ یہ ٹھہرا ٹھہرا دن

کتنا اپنا سا لگتا ہے آج دل بیگانہ بھی

ایک طلسمی راہ فصیل تن سے نواح جاں تک ہے

جس کی کھوج میں کھو جاؤ تو ممکن ہے پا جانا بھی

آگاہی معکوس سفر ہے دانش گاہ کے رستے کا

جس کا ہر جانا پہچانا منظر ہے انجانا بھی

بول وہی ہیں سر بھی وہی مضراب کی جنبش بدلے تو

یاس و الم کے تاروں میں مضمر ہے ایک ترانہ بھی

حاصل اور لا حاصل پر اب ویسے بھی کیا غور کریں

اور چھلکنے والا ہو جب سانسوں کا پیمانہ بھی

کتنی آگ کشاکش کتنی کتنا تحمل ہے درکار

سازؔ کوئی آسان نہیں ہے لفظوں کو پگھلانا بھی

عبد الاحد ساز

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(774) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Abdul Ahad Saaz, Lafzon Ke Sehra Mein Kya Maienay Ke Saraab Dikhnana Bhi in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 117 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.5 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Abdul Ahad Saaz.