Yeh Kaisi Sargoshi Azal Saaz Dil Ke Parday Hila Rahi Hai

یہ کیسی سرگوشیٔ ازل ساز دل کے پردے ہلا رہی ہے

یہ کیسی سرگوشیٔ ازل ساز دل کے پردے ہلا رہی ہے

مری سماعت کھنک رہی ہے کہ تیری آواز آ رہی ہے

حوادث روزگار میری خوشی سے کیا انتقام لیں گے

کہ زندگی وہ حسین ضد ہے کہ بے سبب مسکرا رہی ہے

ترا تبسم فروغ ہستی تری نظر اعتبار مستی

بہار اقرار کر رہی ہے شراب ایمان لا رہی ہے

فسانہ خواں دیکھنا شب زندگی کا انجام تو نہیں ہے

کہ شمع کے ساتھ رفتہ رفتہ مجھے بھی کچھ نیند آ رہی ہے

اگر کوئی خاص چیز ہوتی تو خیر دامن بھگو بھی لیتے

شراب سے تو بہت پرانے مذاق کی باس آ رہی ہے

خرد کے ٹوٹے ہوئے ستارے عدمؔ کہاں تک چراغ بنتے

جنوں کی روشن روش ہے آخر دلوں کو رستے دکھا رہی ہے

عبدالحمید عدم

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(3153) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Abdul Hameed Adam, Yeh Kaisi Sargoshi Azal Saaz Dil Ke Parday Hila Rahi Hai in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad Urdu Poetry. Also there are 83 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 5 out of 5 stars. Read the Sad poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Abdul Hameed Adam.