Khuli Jab Ankh Tu Dekha K Tha Bazar Ka Halqa

کھلی جب آنکھ تو دیکھا کہ تھا بازار کا حلقہ

کھلی جب آنکھ تو دیکھا کہ تھا بازار کا حلقہ

خدا معلوم کب ٹوٹا مرے پندار کا حلقہ

طلوع شام بھی مجھ کو نوید صبح فردا ہے

کہیں چمکے ہلال ابروئے خم دار کا حلقہ

مرا خون تمنا ہے حنا بند کف قاتل

جنون شوق کام آیا فراز دار کا حلقہ

دل بت آشنا کچھ اس طرح سوئے حرم آیا

برہمن جیسے نکلے توڑ کر زنار کا حلقہ

طلب کی راہ میں پائے انا سے بارہا الجھا

کبھی انکار کا حلقہ کبھی اقرار کا حلقہ

یہ کوئے غم بدل جائے نہ اب دشت تمنا سے

جنوں انگیز ہے زنداں کی ہر دیوار کا حلقہ

ہر اک محفل میں جانا ہر کسی سے بات کر لینا

گوارا کر نہیں سکتا مرے معیار کا حلقہ

لہو قدموں سے یوں پھوٹا کہ زنجیریں لہک اٹھیں

منور ہو گیا زندان تنگ و تار کا حلقہ

غم امروز نے پیماں کیا ہے عشق فردا سے

کبھی تو ہوگا شانہ گیر زلف یار کا حلقہ

کوئی آساں نہ تھا لیکن بہت مشکل نہ تھا طرزیؔ

مری ضرب نفس سے کھل گیا اسرار کا حلقہ

عبدالمنان طرزی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(425) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Abdul Mannan Tarzi, Khuli Jab Ankh Tu Dekha K Tha Bazar Ka Halqa in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 22 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.9 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Abdul Mannan Tarzi.