Ankhoon Main Murawat Tere Ee Yaar Kahan Hai

آنکھوں میں مروت تری اے یار کہاں ہے

آنکھوں میں مروت تری اے یار کہاں ہے

پوچھا نہ کبھو مجھ کو وہ بیمار کہاں ہے

نو خط تو ہزاروں ہیں گلستان جہاں میں

ہے صاف تو یوں تجھ سا نمودار کہاں ہے

آرام مجھے سایۂ طوبیٰ میں نہیں ہے

بتلاؤ کہ وہ سایۂ دیوار کہاں ہے

لاؤ تو لہو آج پیوں دختر رز کا

اے محتسبو دیکھو وہ مردار کہاں ہے

فرقت میں اس ابرو کی گلا کاٹوں گا اپنا

میاں دیجو اسے دم مری تلوار کہاں ہے

جن سے کہ ہو مربوط وہی تم کو ہے میمون

انسان کی صحبت تمہیں درکار کہاں ہے

دیکھوں جو تجھے خواب میں میں اے مہ کنعاں

ایسا تو مرا طالع بیدار کہاں ہے

سنتے ہی اس آواز کی کچھ ہو گئی وحشت

دیکھو تو وہ زنجیر کی جھنکار کہاں ہے

دن چھینے وو جب دیکھیو غارت گری اس کی

تب سوچیو خورشید کی دستار کہاں ہے

اس دن کے ہوں صدقے کہ تو کھینچے ہوے تلوار

یہ پوچھتا آوے وہ گنہ گار کہاں ہے

ہنستے تو ہو تم مجھ پہ ولیکن کوئی دن کو

روؤگے کہ وہ میرا گرفتار کہاں ہے

اے غم مجھے یاں اہل تعیش نے ہے گھیرا

اس بھیڑ میں تو اے مرے غم خوار کہاں ہے

جب تک کہ وہ جھانکے تھا ادھر مہر سے ہم تو

واقف ہی نہ تھے مہر پر انوار کہاں ہے

اس مہ کے سرکتے ہی یہ اندھیر ہے احساںؔ

معلوم نہیں رخنۂ دیوار کہاں ہے

عبدالرحمان احسان دہلوی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(1393) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Abdul Rahman Ehsan Dehlvi, Ankhoon Main Murawat Tere Ee Yaar Kahan Hai in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 39 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.7 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Abdul Rahman Ehsan Dehlvi.